سرورق / خبریں / 4مارچ کو سدارامیا کے ہاتھوں چرچ اسٹریٹ کاافتتاح ’10پارکنگ بے‘ کی تعمیرپربی بی ایم پی کا غور،گاڑیوں سے فری زون بنانے مقامی لوگوں کا مطالبہ-

4مارچ کو سدارامیا کے ہاتھوں چرچ اسٹریٹ کاافتتاح ’10پارکنگ بے‘ کی تعمیرپربی بی ایم پی کا غور،گاڑیوں سے فری زون بنانے مقامی لوگوں کا مطالبہ-

بنگلورو:25؍فروری(سالارنیوز)چرچ اسٹریٹ میں تعمیری کام گزشتہ 22؍فروری 2017سے چل رہا ہے ۔چونکہ کام میں کافی تاخیر ہوگئی جس کی وجہ سے یہاں کے کاروباریوں کو کافی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑا مگر اب کام آخری مرحلہ میں ہے ۔رواں ماہ میں اس کو مکمل کرلیا جائے گا۔اس کے بعد 4؍مارچ 2018کو اس کا افتتاح ریاستی وزیر اعلیٰ سدارامیا کے ہاتھوں عمل میں آئے گا۔ان خیالات کا اظہار اخباری نمائندوں سے بات چیت کے دوران بروہت بنگلور مہانگر پالیکے(بی بی ایم پی )کے سینئر افسرنے کیا۔انہوں نے کہاکہ اب اس میں مزید تاخیر نہیں ہوگی۔اس سلسلہ میں تمام تیاریاں کرلی گئی ہیں اور بی بی ایم پی نے اس سلسلہ میں وزیر اعلیٰ سے اجازت بھی حاصل کرلی ہے۔بی بی ایم پی کے چیف انجینئر کے ٹی ناگراج نے اس موقع پر بتایاکہ برگیڈ روڈ سے سینٹ مارکس روڈ تک 750میٹر فاصلہ کی اس سڑک کی تعمیری کام مکمل کرلیا گیاہے ۔رسمی طور پر اس کا افتتاح سدارامیاکے ہاتھوں عمل میں آئے گا۔حالانکہ ابھی پارکنگ بے بنانے کا کام باقی ہے۔مگر آئندہ ماہ اس راستہ کو عوام کے لئے کھول دیا جائے گا۔واضح ہوکہ برگیڈ روڈ سے ریسٹ ہاؤز روڈ تک 450میٹر طویل سڑک نئے سال کے موقع پر یکم جنوری 2018کو عوام کے لئے کھول دیا گیاتھا۔مسٹر ناگراج نے بتایاکہ چرچ اسٹریٹ کی تعمیر نئی ٹکنالوجی کے ساتھ کی گئی ہے۔اس روڈ پر ایل ای ڈی بلبس لگائے گئے ہیں۔بی بی ایم پی نے منصوبہ بنایاہے کہ اس روڈ پر مختلف علاقوں میں ’10پارکنگ بے‘ کی تعمیر کی جائے گی ۔جس میں 250ٹووھیلرس اور 15فوروھیلرس پارک کرنے کی گنجائش ہوگی۔اس کے علاوہ بی پی ایل کمپنی کی جانب سے بی بی ایم پی نے جگہ جگہ اسپیکرس بھی نصب کئے گئے ہیں۔بروہت بنگلور مہا نگر پالیکے( بی بی ایم پی ) شہر کی چرچ اسٹریٹ کو ہفتہ کے آخر میں سواریوں سے پاک زون بنانے کا منصوبہ بنا رہی ہے ۔ اس سلسلہ میں ماہرین نے بتایا کہ یہ منصوبہ راہگیروں کے لئے سود مند ثابت ہوگا ۔ بی بی ایم پی کے ایکزی کیٹیوانجینئر ایم لوکیش نے بتایا کہ حالانکہ یہاں کی سڑک پر گزشتہ ایک سال سے تعمیری کام چل رہا ہے اور اسے مارچ کے ابتدائی ہفتہ میں مکمل کردیا جائے گا ۔ اس دوران وہاں ایک سال سے سواریوں کی آمدورفت پرروک لگایا گیا ہے ۔ تاہم سڑک کو مستقل راہگیرزون بنانے کیلئے بی بی ایم پی کو بنگلورو کی ٹریفک پولیس سے اجازت لینی ہوگی۔ شہری امور کے ماہر وی روی چندر بھی ان لوگوں میں شامل ہیں جنہوں نے سڑک کو مستقل راہگیرزون بنانے کی حمایت کی ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ اس سڑک پر گزشتہ ایک سال سے سواریوں کی آمدورفت نہیں ہے اس کے باوجود کسی طرح کی کوئی دشواری نہیں ہوئی ۔ اسلئے بہتر ہوگا کہ اسے سواریوں سے دور ہی رکھا جائے۔راہگیروں کیلئے یہ ایک بڑا قدم ہے۔ انہوں نے مزید بتایا کہ چرچ اسٹریٹ پر نافذ کرنے کے بعد شہر کے دوسرے حصوں میں بھی نافذ کرنے میں آسانی ہوگی۔اس منصوبہ کی حمایت بنگلور شہریوں کے چیف کو آر ڈینیٹر سرینواس الاویلی بھی ایک قوی حامی ہیں ۔ انہوں نے بتایا کہ اس منصوبہ کے ذریعہ وہاں سڑک پر کاروبار پر اثر نہیں پڑنا چاہئے۔ راہگیروں پر توجہ دیتے ہوئے اس سڑک کو رول ماڈل بنانے کی بات کہی گئی ہے ۔ اس منصوبہ کی شروعات کرنے کیلئے پہلے شام 4بجے سے9بجے تک گاڑیوں پر پابندی نافذ کی ہے۔ انہوں نے مزید بتایا کہ پالیکے کے اس اقدام سے بہت زیادہ لوگوں کا وہاں سڑک پر آنا جانا ہوگا ۔ جس کے ذریعہ کاروبار میں تین گنا اضافہ ہوگا۔ الاویلی نے بتایا کہ یہ ایک حمایتی منصوبہ ہے جسے شہر کے جئے نگر فورتھ بلاک اورملیشورم 18کراس جیسے سڑکوں اور دیگر زون پر نافذ کیا جاسکتا ہے۔اس سلسلہ میں بایو کان کے بانی اور سی ایم ڈی کرن مزمدار نے اپنی ٹویٹ میں بتایا کہ پوری دنیا میں سڑکوں کو صبح دس بجے سے رات دس بجے تک سواریوں پر پابندی ہے۔ اور کام کاج کو ان اوقات کے بعد پورے کئے جاتے ہیں۔ اڈیشنل کمشنر آف پولیس (ٹریفک) ہیتندرا نے بتایا کہ اس سلسلہ میں بی بی ایم پی نے اب تک ان سے رجوع نہیں کیا ہے ۔ اس لئے کوئی بھی فیصلہ لینے سے قبل عوام کا خیال رکھنا بہت ضروری ہے۔ انہوں نے اس بات کی بھی وضاحت کی کہ اس وقت شہر میں ٹریفک بہت ہی تیزی کے ساتھ بڑھ رہی ہے ۔ ایسے میں کسی علاقے کو گاڑیوں سے فری کرنا بہت بڑی بات ہے۔ حالانکہ پرسکون ماحول کیلئے اس طرح کے اقدامات ضروری ہیں مگر ہمیں ان لوگوں کا بھی خیال رکھنا ہے جو گاڑیوں کے ساتھ یہاں آتے ہیں۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

کروناندھی کی حالت بگڑی –

چنئی (ایجنسیز) تملناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ اور ڈی ایم کے کے سربراہ ایم کروناندھی …

جواب دیں

%d bloggers like this: