سرورق / خبریں / 2019کے لئے مضبوط یو پی اے ۔3بنائیں گے ، راہل اس کے لیڈر ہوں گے

2019کے لئے مضبوط یو پی اے ۔3بنائیں گے ، راہل اس کے لیڈر ہوں گے

نئی دہلی، کانگریس کی نوتشکیل شدہ اعلی پالیسی ساز ادارہ نے آئندہ لوک سبھا انتخابات کی حکمت عملی پر گہرائی سے غور و خوض کے دوران اس بات کا اعتراف کیا کہ مرکز میں حکمراں قومی جمہوری اتحاد (این ڈی اے) کو شکست دینے کیلئے وسیع ترقی پسند اتحاد (ایو پی اے) ناگزیر ہے لیکن یہ یقینی بنانا ہوگا کہ اتحاد میں کانگریس سب سے بڑی پارٹی کے طورپر ابھرے اور پارٹی کے صدر راہل گاندھی ہی اس کے لیڈر رہیں۔مسٹر گاندھی کی صدارت میں اتوار کو منعقدہ کانگریس ورکنگ کمیٹی کی میٹنگ میں لنچ سے پہلے تقریباََ دو گھنٹے تک آ ئندہ لوک سبھا انتخابات کی حکمت عملی پر باریکی سے غورو خوض کیا گیا۔ ذرائع نے کیرالہ کے تعلق سے سوال پوچھے جانے پر بتایا کہ میٹنگ میں تمام نے تسلیم کیا کہ 2019میں وسیع اتحادی ضروری اور لازمی ہو گا کیونکہ اس کے بغیر وزیراعظم نریندر مودی کی قیادت والی این ڈی اے حکومت کو اقتدار سے بے دخل کرنا مشکل ہوگا۔ذرائع کے مطابق مسٹر پی چدمبرم نے اتحاد کی لازمیت کے تعلق سے یہ خیال رکھا جس کی پنجاب کے وزیراعلی کیپٹن امرندر سنگھ نے تائید کی۔ ذرائع کے مطابق کانگریس لیڈروں نے اتحاد کے بارے میں کہاکہ یہ اس طرح سے کیاجانا ہئے کہ کانگریس زیادہ سے زیادہ سیٹیں جیت کر سب سے بڑی پارٹی کے طورپر ابھرے اور کانگریس کے صدر راہل گاندھی ہی اتحاد کا اہم چہرہ ہوں۔ انہو ں نے اس کے لئے مختلف علاقائی پارٹیوں سے بات چیت کرکے اتحاد کو تیار کرنے کاکام جلد از جلد شروع کرنے پر بھی زور دیا۔لنچ کے بعد موجودہ سیاست اور کانگریس کو درپیش چیلنجوں اور پورے ملک میں پارٹی کے اتحاد کو مضبوط کرنے اور اپوزیشن جماعتوں کو مضبوط قیادت دینے کے بارے میں بات چیت ہونے کی امید ہے۔پارٹی کے محکمہ مواصلات کے سربراہ رندیپ سنگھ سرجے و الا نے کہاکہ میٹنگ میں پارٹی کے 2020 تک کے روڈمیپ، کسانوں، بے روزگاروں ، دلتوں قبائلیوں کے امور کے ساتھ ساتھ ملک کی داخلی اور باہری سلامتی پر تبادلہ خیال ہوگا۔مسٹر گاندھی نے گزشتہ ہفتہ ہی پارٹی کی نئی ورکنگ کمیٹی قائم کی ہے۔ پارٹی کے کنونشن میں مسٹر گاندھی کو ورکنگ کمیٹی قائم کرنے کی ذمہ داری سونپی گئی تھی او رحال ہی میں انہوں نے 23اراکین، 18مستقل انوائٹی اور دس خصوصی انوائٹی اراکین کی تقرری کرکے کمیٹی کی تشکیل نو کی ہے۔ نئی ورکنگ کمیٹی کی یہ پہلی میٹنگ ہے۔ میٹنگ سے مسٹر گاندھی کے علاوہ سابق صدر سونیا گاندھی، سابق وزیراعظم منمون سنگھ اور پارٹی کے جنرل سکریٹری اشوک گہلوت کے خطاب کرنے کی امید ہے۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

کروناندھی کی حالت بگڑی –

چنئی (ایجنسیز) تملناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ اور ڈی ایم کے کے سربراہ ایم کروناندھی …

جواب دیں

%d bloggers like this: