سرورق / خبریں / حلف برداری تقریب اپوزیشن اتحاد کا مظہر ہوگی سونیا اور راہل کی شرکت۔ 23؍مئی کو کانگریس کرناٹک میں حکومت سازی کا جشن منائے گی –

حلف برداری تقریب اپوزیشن اتحاد کا مظہر ہوگی سونیا اور راہل کی شرکت۔ 23؍مئی کو کانگریس کرناٹک میں حکومت سازی کا جشن منائے گی –

 

بنگلورو۔ جنتادل (سکیولر) کے ریاستی صدر ایچ ڈی کمار سوامی بروز چہارشنبہ 23؍مئی شام 4؍بجے ودھان سودھا کے روبرو ریاست کے 24؍ویں وزیراعلیٰ کی حیثیت سے عہدہ کی راز داری کا حلف لیں گے۔ اس تقریب میں بشمول کانگریس صدر راہل گاندھی ،یو پی اے چیرپرسن سونیاگاندھی ، دہلی کے وزیراعلیٰ اروند کجریوال ، بنگال کی وزیراعلیٰ ممتابنرجی ، آندھرا کے وزیراعلیٰ چندرا بابو نائیڈو، تلنگانہ کے وزیراعلیٰ سی۔ چندرشیکھر راؤ ، بی ایس پی کی سربراہ مایاوتی،22؍ریاستوں کے لیڈروں کی شرکت متوقع ہے۔ کمار سوامی کی حلف برداری تقریب سے نہ صرف کانگریس اور جے ڈی ایس اتحاد کی جھلک نظر آئے گی بلکہ مستقبل میں بننے والے اپوزیشن کے اتحاد کی پوری تصویر بھی دکھائی دے گی۔ کمار سوامی کے والد سابق وزیراعظم ایچ ڈی دیوے گوڑا نے بذات خود وزیراعلیٰ اروند کجریوال کو ان کے فرزند کی حلف برداری تقریب میں حصہ لینے کی دعوت دی ہے۔ حلف برداری تقریب میں شامل ہونے کی تصدیق کجریوال کے دفتر نے بھی کی ہے۔

سونیا کی شرکت : کانگریس ذرائع کے مطابق راہل گاندھی اور سونیاگاندھی اس تقریب میں شرکت کریں گے۔ بتایا جارہا ہے کہ کانگریس لیڈروں نے بہت سوچ سمجھ کر حلف برداری تقریب میں سونیا کی شرکت کا فیصلہ کیا ہے۔ کانگریس ذرائع کے مطابق حلف برداری تقریب میں اپوزیشن پارٹیوں کے کئی ایسے لیڈر شامل ہوں گے جو ہنوز راہل گاندھی کے ساتھ میل ملاپ میں بہتری محسوس نہیں کرتے لیکن سونیاگاندھی کے ساتھ ان کے تعلقات آج بھی بہت بہتر ہیں۔ ان میں دولیڈر شرد پواراور ممتا بنرجی کے شامل قابل ذکر ہیں۔ ان کے علاوہ آندھرا پردیش کے وزیراعلیٰ چندرا بابو نائیڈو اور تلنگانہ کے وزیراعلیٰ چندر شیکھر راؤ کا نام بھی لیا جاسکتا ہے جن کے ساتھ راہل کے راہ ورسم بہتر نہیں۔ یہ تمام لیڈر حلف برداری تقریب میں شرکت کریں گے۔ کانگریس ذرائع کے مطابق پارٹی، اپوزیشن پارٹی کو متحد کرنے کے لئے راہل کے بجائے سونیا گاندھی کو ایک مرتبہ پھر آگے کرے گی۔ اپوزیشن کے کئی لیڈر راہل گاندھی کی قیادت میں اپوزیشن پارٹیوں کا مورچہ بنانے کو تیار نہیں ہیں۔ ہاں سونیا کے نام پر زیادہ تر پارٹیاں اس پر راضی ہوسکتی ہیں۔ ایسے میں اگر کانگریس کی طرف سے حلف برداری تقریب میں اکیلے راہل گاندھی قیادت کریں گے تو اپوزیشن پارٹیوں میں یہ پیغام جائے گا کہ کانگریس راہل گاندھی کو اپوزیشن کے لیڈر کے طور پر پیش کررہی ہے جیسا کہ گزشتہ دنوں کرناٹک الیکشن پرچار کے دوران راہل گاندھی نے یہ کہابھی تھا کہ اگر کانگریس پارٹی سب سے بڑی پارٹی بنتی ہے تو وہ وزیراعظم بھی بن سکتے ہیں۔کمارسوامی کے مطابق اس تقریب میں ملک بھر کے تمام اعلیٰ لیڈروں اور بی جے پی مخالف پارٹیوں کے سربراہ موجود رہیں گے۔ انہوں نے بتایا کہ اترپردیش کی اہم جماعتوں سے مایاوتی اور اکھلیش یادو اس تقریب میں موجود رہیں گے۔ وہیں مغربی بنگال کی وزیراعلیٰ ممتا بنرجی، جے ڈی یو کے سابق صدر شرد یادو، آرجے ڈی سے تیجسوی یادو، این سی پی کے سربراہ شردپوار، سی پی آئی ایم سے سیتارام یچوری، ایم کے اسٹالن جیسے تمام بڑے لیڈر شامل ہوں گے۔ذرائع کے مطابق آج دوپہر نئی دہلی میں کرناٹک کے نامزد وزیراعلیٰ کمار سوامی نے ایک خوشگوار ماحول میں سونیا گاندھی اور راہل گاندھی سے ملاقات کی اور انہیں حلف برداری تقریب میں شرکت کرنے کی دعوت بھی دی جس کو دونوں نے قبول کرلیا۔ ان کے ساتھ جے ڈی ایس کے قومی جنرل سکریٹری کنور دانش علی بھی موجود تھے۔ کمار سوامی نے آج بی ایس پی کی مایاوتی سے بھی ملاقات کی اورا نتخابات کے دوران ان کی پارٹی سے اتحاد کرنے پر ان کا شکریہ بھی ادا کیا اور حلف برداری تقریب میں شرکت کی دعوت بھی دی۔
تیاریاں جاری: 23؍مئی کو کمار سوامی کی حلف برداری تقریب کے لئے ودھان سودھا کے روبرو تیاریاں جاری ہیں۔ اس تقریب میں ریاستی گورنر وجوبھائی والا کمار سوامی کو ریاست کے 24؍ویں وزیراعلیٰ کی حیثیت سے عہدہ کی راز داری کا حلف دلائیں گے۔ اس روز کمار سوامی کے علاوہ دیگر دو لیڈران بھی نائب وزیراء اعلیٰ کی حیثیت سے حلف لے سکتے ہیں۔ کہا جارہا ہے کہ سابق وزیراعلیٰ سدارامیا ،ڈاکٹر پرمیشور کو نائب وزیراعلیٰ بننے سے روکنے کی کوشش کررہے ہیں ان کی جگہ انہوں نے ایس آر پاٹل کے نام کی سفارش کی ہے۔ اس دوڑ میں ڈی کے شیوکمار کا نام بھی لیا جارہا ہے۔ اسپیکر کے لئے کانگریس سے رمیش کمار اور جے ڈی ایس سے اے ٹی راما سوامی کا نام لیا جارہا ہے۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

بھونگیر حادثہ۔تلنگانہ کے وزیراعلی کا اظہار افسوس

حیدرآبادتلنگانہ کے وزیراعلی کے چندرشیکھر راو نے ضلع یادادری بھونگیر میں پیش آئے سڑک حادثہ …

جواب دیں

%d bloggers like this: