سرورق / خبریں / ہریانہ میں اسکولی طلبا کے فارم میں والدین کے کاروبار میں ’گندایا نجس‘ بتانے کی کانگریس نے تنقید کی-

ہریانہ میں اسکولی طلبا کے فارم میں والدین کے کاروبار میں ’گندایا نجس‘ بتانے کی کانگریس نے تنقید کی-

نئی دہلی، کانگریس نے ہریانہ میں اسکولی طلبا کے فارم میں والدین کے کاروبار میں ’گندایا نجس ‘ زمرہ کو شامل کرنے کی تنقید کرتے ہوئے ریاست کی کھٹر حکومت سے اس کے لئے معافی مانگنے اور متعلقہ فارم کو واپس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔
کانگریس کے میڈیا انچارج رندیپ سنگھ سرجے والا نے آج یہاں نامہ نگاروں کے سوالات پر کہا کہ ہریانہ کے اسکولوں میں طلبا کو ایک فارم بھرنے کے لئے کہا گیا ہے جس میں تقریباََ ایک سوالات پوچھے گئے ہیں۔ فارم میں جو ذاتی معلومات مانگی گئی ہیں ان کا تعلیم سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ انہوں نے کہاکہ جاسوسی بھارتیہ جنتا پارٹی کے ڈی این اے میں شامل ہوگئی ہے۔ کھٹر حکومت کو واضح کرنا چاہئے کہ اسے اتنی معلومات کیوں چاہئیں۔
مسٹر سرجے والا کے مطابق طلبا سے پوچھا گیا ہے کہ کیا وہ اپنے والدین کے کاروبار’گندا‘ مانتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ ہریانہ حکومت کو واضح کرنا چاہئے کہ وہ کس پیشہ کو گندا مانتی ہے ۔ انہوں نے کہاکہ کھٹر نے پھر وہی کیا۔ طلبا کو ’اچھوت‘ اور ان کے والدے کے پیشہ سے ’گندا‘ ٹھہرایا ہے۔ انہوں نے کہاکہ طلبا سے ان کے کنبہ، ذات ، مذہب ، آدھار کارڈ ، بنک اکاوٹ اور والدین کے پیشہ کی جانکاری مانگی گئی ہے۔ کانگریس لیڈر نے کہا کہ کھٹر حکومت کو ریاست کے لوگوں سے معافی مانگنی چاہئے اور اس فارم کو فوراََ واپس لینا چاہئے۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

کروناندھی کی حالت بگڑی –

چنئی (ایجنسیز) تملناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ اور ڈی ایم کے کے سربراہ ایم کروناندھی …

جواب دیں

%d bloggers like this: