سرورق / خبریں / کمار سوامی نے اسمبلی میں اعتماد کا ووٹ حاصل کرلیا رمیش کمار بلامقابلہ اسپیکر منتخب۔ ریاست کی مجموعی ترقی پر توجہ دینے وزیراعلیٰ کا تیقن

کمار سوامی نے اسمبلی میں اعتماد کا ووٹ حاصل کرلیا رمیش کمار بلامقابلہ اسپیکر منتخب۔ ریاست کی مجموعی ترقی پر توجہ دینے وزیراعلیٰ کا تیقن

بنگلورو۔ ( یو این آئی ۔منیر احمد آزاد۔ چیف رپورٹر) کرناٹک میں ایچ ڈی کمار سوامی کی قیادت والی کانگریس جے ڈی ایس مخلوط حکومت نے آج اسمبلی میں اعتماد کا ووٹ حاصل کرلیا۔ اسمبلی اسپیکر رمیش کمار نے صوتی ووٹ سے تحریک اعتماد کو منظوری دے دی۔ اس وقت اپوزیشن بی جے پی اراکین ایوان میں موجود نہیں تھے۔ اپوزیشن بی جے پی لیڈر بی ایس ایڈی یورپا کی تقریر کے فوری بعد بی جے پی اراکین نے ایوان سے واک آؤٹ کردیاتھا۔ کمار سوامی نے ایوان میں تحریک اعتماد پیش کرتے ہوئے اپنے پہلے خطاب میں کہاکہ کانگریس جے ڈی ایس مخلوط حکومت اپنے پانچ سال کی مدت کامیابی کے ساتھ مکمل کرے گی۔ انہوں نے کہاکہ ان کے وزیراعلیٰ بننے میں ان کا کوئی ذاتی ایجنڈا نہیں ہے بلکہ ملکی سطح کے کئی سکیولر لیڈروں کے مشورہ پر ریاست کرناٹک کی ترقی اور ساڑھے چھ کروڑ عوام کی فلاح و بہبودی کے لئے اقتدار سنبھالا ہے۔ انہوں نے الزام لگایا کہ بی جے پی اب بھی اقتدار میں آنے کے لئے اراکین اسمبلی کی خرید وفروخت کی کوشش کررہی ہے۔ انہوں نے جمہوریت کے محافظ ہونے سے متعلق وزیراعظم نریندر مودی کے ایک بیان کے حوالہ سے بی جے پی پر الزام لگایا کہ وہ (وزیر اعظم) چاہتے ہیں کہ مرکز اور ریاست میں بی جے پی کی ہی حکومت ہو۔
قرضوں کی معافی: کسانوں کے قرضوں کی معافی کے تعلق سے اپنی حکومت کے عزم کا اعادہ کرتے ہوئے کہاکہ اتحادی حکومت میں اتحادی کانگریس کے ساتھ تبادلہ خیال کے بعد اس سمت میں وہ ہر ممکن کوشش کریں گے۔ کسانوں کے قرضے معاف کرنے کا انہوں نے کوئی وقت نہیں بتایا۔ وزیر اعلیٰ نے ایوان کو تیقن دیا کہ نئی حکومت سماج کے مختلف طبقوں کے مسائل حل کرنے پوری توجہ دے گی اور لوگوں کو تحریک کا راستہ اختیارکرنے کی اجازت ہرگز نہیں دے گی۔ دوسری طرف اپوزیشن لیڈر بی ایس ایڈی یورپا نے حکومت کو متنبہ کیا ہے کہ اگر28؍مئی سے پہلے کسانوں کے قرضوں کی معافی کا اعلان نہیں کیاگیا تو ان کی پارٹی ریاست گیر تحریک شروع کرے گی۔ کمار سوامی نے مزید کہاکہ وہ کانگریس کی طرف سے غیر مشروط حمایت اور درخواست پر ہی حکومت کی قیادت کرنے کے لئے راضی ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ نہ صرف مخلوط حکومت کی کامیابی یقینی بنائی جائے گی بلکہ کرناٹک کو ملک کا ماڈل اسٹیٹ بنایا جائے گا۔ انہوں نے کہاکہ جے ڈی ایس کے انتخابی منشور میں کئے گئے وعدوں کے علاوہ کانگریس کی طرف سے اعلان شدہ پروگرام کا بھی نفاذ کیا جائے گا۔ اس کے ساتھ ہی پچھلی سدارامیا حکومت کے فلاح وبہبود کے پروگراموں کو بھی جاری رکھا جائے گا۔ کمار سوامی نے کہاکہ کوئی بھی یک طرفہ فیصلہ نہیں کیا جائے گا اور حکومت کا ہر اہم فیصلہ اتحادی پارٹی کے ساتھ بات چیت کے بعد ہی کیا جائے گا۔ کمار سوامی نے مرکز کو وارننگ دی کہ اگر وہ انتقامی کارروائی کرتا ہے اور انفورسمنٹ ڈائرکٹوریٹ اور انکم ٹیکس محکمہ کا غلط استعمال کرتا ہے تو اس کا خمیازہ بھگتنا پڑے گا۔ انہوں نے مودی حکومت پر الزام لگایا کہ وہ اعلیٰ پیمانے پر جھوٹ کی تشہیر کررہی ہے۔
رمیش کمار کرناٹک اسمبلی کے اسپیکر منتخب:مسٹرکے آررمیش کمارآج کرناٹک قانون سازاسمبلی کے متفقہ طورپراسپیکرمنتخب ہوئے ۔سابق وزیررمیش کمار کے نام کی تجویزنائب وزیر اعلیٰ جی پرمیشور کی طرف سے پیش کی گئی تھی اور سابق وزیر اعلیٰ سدارمیا نے اس تجویز کی تائید کی۔اس سے پہلے بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) نے اسپیکرکے عہدہ کے لئے نامزدکئے جانے والے سریش کمارکا نام واپس لے لیا۔سینئر بی جے پی رہنما اور سابق وزیر اعلیٰ بی ایس ایڈی یورپا نے کہا کہ پارٹی نے اسپیکرکے عہدے کے وقار کو برقرار رکھنے کے لئے اپنی امیدواری کو واپس لے لیا ہے ۔مسٹررمیش کمارچھ بارایم ایل اے رہ چکے ہیں اور 1994 سے 1999کے درمیان بھی اس عہدے پرتھے ۔وزیر اعلیٰ ایچ ڈی کمارسوامی نے مسٹر رمیش کمار کو مبارکباد دی۔انہوں نے کہاکہ’آپ 1994تا1999کے دوران اسپیکر رہ چکے ہیں۔آپ کے طریقہ کار اور ایوان کوچلانے کی مؤثر ذمہ داری اب بھی ایک مثال ہے ۔‘انہوں نے اپوزیشن کے امیدوارکا نام واپس لینے اوربلامقابلہ انتخاب کاراستہ ہموارکرنے کے لئے ان کاشکریہ ادا کیا۔مسٹرایڈی یورپا نے کہا کہ’اسپیکرکا عہدہ سب سے زیادہ معزز ہوتاہے اور اس وجہ سے ہم نے بلامقابلہ انتخاب کے لئے اپنے امیدوارکانام واپس لینے کا فیصلہ کیا۔ڈاکٹر پرمیشورنے بھارتیہ جنتاپارٹی کااپناامیدوار واپس لئے جانے پر شکریہ ادا کیاْ۔انہوں نے کہاکہ’میں نے کل بی جے پی کے ریاستی صدر بی ایس ایڈی یورپا سے ملاقات کی۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

کروناندھی کی حالت بگڑی –

چنئی (ایجنسیز) تملناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ اور ڈی ایم کے کے سربراہ ایم کروناندھی …

جواب دیں

%d bloggers like this: