سرورق / خبریں / پونچھ میں فوج اور پولیس انتظامیہ نے پاکستان زیر قبضہ کشمیر کے لڑکے کو تحائف کے ساتھ واپس بھیجا –

پونچھ میں فوج اور پولیس انتظامیہ نے پاکستان زیر قبضہ کشمیر کے لڑکے کو تحائف کے ساتھ واپس بھیجا –

پونچھ ، جموں وکشمیر کے ضلع پونچھ میں لائن آف کنٹرول(ایل او سی) کے بالاکوٹ سیکٹر پر غیر دانستہ طور پر بھارتی حدود میں داخل ہونے والے پاکستان زیر قبضہ کشمیر کے 12 سالہ لڑکے کو نئے کپڑے پہناکر اور تحفے میں مٹھائی کا ڈبہ دیکر واپس بھیج دیا گیا ہے۔
سرکاری ذرائع نے بتایا کہ پاکستان زیر قبضہ کشمیر کے کنڈی نکیال کا رہنے والا 12 سالہ لڑکا محمد زاہد ولد محمد عارف جو کہ ذہنی طور پر معذور ہے، 22 اپریل کو غیر ارادی طور پر بالاکوٹ سیکٹر کے راستے سرحد کے اس پر داخل ہوا۔ انہوں نے بتایا کہ ایل او سی کی حفاظت پر مامور فوجیوں نے اسے پکڑ کر مینڈھر پولیس کے حوالے کردیا۔ ذرائع نے بتایا کہ فوج اور پولیس انتظامیہ نے پاکستانی فوج سے ہاٹ لائن پر رابطہ قائم کرکے فلیگ میٹنگ کی تجویز پیش کی۔ انہوں نے بتایا ’طرفین کے مابین چکاں دا باغ کراسنگ پوائنٹ پر میٹنگ ہوئی اور مذکورہ لڑکے کو پاکستانی فوج کے حوالے کردیا گیا‘۔ ذرائع نے بتایا کہ محمد زاہد کو بدھ کے روز نئے کپڑے پہناکر اور تحفے میں مٹھائی کا ڈبہ دیکر پاکستانی فوج کے حوالے کیا گیا۔
ریاستی پولیس کے ایک سینئر عہدیدار نے تفصیلات فراہم کرتے ہوئے کہا ’12 اپریل کو ہمیں اطلاع ملی تھی کہ ایک چھوٹا لڑکا محمد زاہد ولد محمد عارف غیردانستہ طور پر ایل او سی عبور کرکے ہماری حدود میں آگیا ہے۔ اس کو فوجی اہلکاروں نے پکڑ کر مینڈھر تھانے کے حوالے کیا تھا۔ طبی جانچ سے ہمیں معلوم ہوا کہ مذکورہ لڑکا ذہنی طور پر معذور ہے۔ اس دوران وٹس ایپ گروپوں پر ایک ویڈیو گردش کرنے لگا جس میں مذکورہ لڑکے کے دادا نے پاکستان انتظامیہ سے ایک جذباتی اپیل کی تھی کہ اس کے پوتے کو ڈھونڈ نکالا جائے‘۔
انہوں نے کہا ’ہم نے وہاں سے کسی گذارش کا انتظار نہیں کیا۔ جب ہمیں معلوم ہوا کہ لڑکا ذہنی طور پر معذور ہے، تو ہم نے انڈین آرمی کو اطلاع دی اور انڈین آرمی نے اسے اپنی ترجیح مانتے ہوئے پاکستان انتظامیہ کو مطلع کیا۔ بدھ کے روز ہم نے لڑکے کو انسانی بنیادوں پر چکاں دا باغ کراسنگ پوائنٹ کے راستے سے پاکستانی انتظامیہ کے حوالے کردیا‘۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

کروناندھی کی حالت بگڑی –

چنئی (ایجنسیز) تملناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ اور ڈی ایم کے کے سربراہ ایم کروناندھی …

جواب دیں

%d bloggers like this: