سرورق / خبریں / وزیر اعظم کے تحفظ کے سلسلے میں سیاست نہیں ہونی چاہئے: کانگریس

وزیر اعظم کے تحفظ کے سلسلے میں سیاست نہیں ہونی چاہئے: کانگریس

نئی دہلی، (یو این آئی) کانگریس نے آج کہا کہ وزیر اعظم کی حفاظت سے جڑے معاملے كو سنجیدگی سے لے کر اس کی باریک بینی سے جانچ ہونی چاہئے اور اس پر سیاست نہیں کی جانی چاہئے۔
خیال رہے کہ مہاراشٹر کے بھیما كورےگاؤں تشدد کے معاملے میں پولیس نے دو دن پہلے پانچ افراد کو گرفتار کیا تھا اور انہیں نکسلی بتاکر عدالت میں پیش کیا گیا تھا۔ پولیس نے ان میں سے ایک کے پاس سے ایک خط برآمد ہونے کا دعوی کیا ہے جس میں راجیو گاندھی قتل جیسی واردات کو انجام دے کر وزیر اعظم نریندر مودی پر حملہ کرنے کا اشارہ دیا گیا ہے۔ مرکزی وزیر رام داس اٹھاولے کا الزام ہے کہ گرفتار شدہ تمام لوگ دلت مفادات کے لئے کام کرنے والے کارکن ہے اور انہیں نکسلی بتاکر پھنسایا جا رہا ہے۔
کانگریس کے ترجمان پون کھیڑا نے صحافیوں کو یہاں بتایا کہ وزیراعظم کی سلامتی ایک حساس معاملہ ہے اور اسے سنجیدگی سے لیا جانا چاہئے اور اس کی باریکی سے جانچ پڑتال کی جانی چاہیے۔ کانگریسی دہشت گردی، نکسلزم اور انتہا پسندی کا درد سمجھتے ہیں۔ پارٹی نے مہاتما گاندھی، اندرا گاندھی، راجیو گاندھی، سردار بے انت سنگھ، ودیا چرن شکل، نند کمار پٹیل اور دیگر کئی لیڈروں کی قربانی دی ہے۔
ترجمان نے کہا کہ مرکزی حکومت کے وزیر رام داس اٹھاولے کہتے ہیں کہ دلت مفادات کے لئے کام کرنے والے لوگوں کو گرفتار کیا گیا ہے اور مہاراشٹر حکومت انہیں ماؤنواز قرار دے رہی ہے۔ اس معاملے میں سچائی کیا ہے یہ سب کے سامنے آنا چاہئے۔
انہوں نے کہا کہ اس پر سیاست نہیں ہونی چاہئے۔ بھیماپور گاؤں میں ہر سال لوگ پر امن طریقے سے شجاعت کا جشن مناتے ہیں ۔ یہ پروگرام ہر سال وہاں برسوں سے ہر سال منعقد ہوتا ہے۔ اگر مرکزی وزیر صحیح بول رہے ہیں تو، دلتوں کے مفادات کے لئے کام کرنے والوں کو پھنسایا نہیں جانا چاہئے اور ان کے خلاف کارروائی نہیں ہونی چاہئے۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

کروناندھی کی حالت بگڑی –

چنئی (ایجنسیز) تملناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ اور ڈی ایم کے کے سربراہ ایم کروناندھی …

جواب دیں

%d bloggers like this: