سرورق / خبریں / وادی کشمیر: روتی بلکتی ماؤں کو دیکھ کر میرا دل ٹوٹ جاتا ہے: محبوبہ مفتی

وادی کشمیر: روتی بلکتی ماؤں کو دیکھ کر میرا دل ٹوٹ جاتا ہے: محبوبہ مفتی

سری نگر ، جموں وکشمیر کی وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے جنوبی کشمیر کے دو اضلاع شوپیان اور اننت ناگ میں ایک ہی دن کے اندر پیش آئی 20 ہلاکتوں کے تناظر میں کہا ہے کہ ہم سب کو سیاسی اختلافات ایک طرف چھوڑ کر نئے طریقوں پر غور کرکے نوجوانوں تک پہنچنے اور پائیدار حل تلاش کرنے کے لئے کام کرنا چاہیے تاکہ خون ریزی کا سلسلہ ختم ہو اور نوجوان نسل کو ضائع ہونے سے بچایا جاسکے۔ انہوں نے کشمیری نوجوانوں کے جنگجوؤں کی صفوں میں شمولیت اختیار کرنے کے رجحان پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ہر روز میرا دل ٹوٹ جاتا ہے جب میں بیٹے کو واپس لوٹنے کی آواز دیتی روتی بلکتی ماں کو دیکھتی ہوں۔
محترمہ مفتی نے ان باتوں کا اظہار مائیکرو بلاگنگ کی ویب سائٹ ٹویٹر پر اپنے دو سلسلہ وار ٹویٹس میں کیا۔ وہ ظاہری طور پر نیشنل کانفرنس کے کارگذار صدر و سابق وزیر اعلیٰ عمر عبداللہ کے الزامات و تنقیدوں پر اپنا ردعمل ظاہر کررہی تھیں۔ انہوں نے کہا ’اتوار سے پیش آئے تشدد کے واقعات اس حقیقت کی سنگین یاد دہانی ہے کہ اس طرح کے موقعوں پر ہم سب کو سیاسی اختلافات ایک طرف چھوڑ کر نئے طریقوں پر غور کرکے نوجوانوں تک پہنچنے اور پائیدار حل تلاش کرنے کے لئے کام کرنا ہے تاکہ خون ریزی کا سلسلہ ختم ہو اور نوجوان نسل کو ضائع ہونے سے بچایا جاسکے‘۔ انہوں نے کہا ’ہر روز میرا دل ٹوٹ جاتا ہے جب میں بیٹے کو واپس لوٹنے کی آواز دیتی روتی بلکتی ماں کو دیکھتی ہوں۔تو کیا ہم اپنے الزامات اور جوابی الزامات ایک طرف چھوڑ سکتے ہیں اور اپنے نوجوانوں کو بچانے کے لئے مل کر کوئی راستہ تلاش کریں‘۔
بتادیں کہ عمر عبداللہ نے بڑی تعداد میں کشمیری نوجوانوں کی جنگجوؤں کی صفوں میں شمولیت کو وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی کی سب سے بڑی ناکامی قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ جنوبی کشمیر کے شوپیان اور اننت ناگ اضلاع میں اتوار کو مارے گئے بیشتر جنگجو نئے ریکروٹ تھے۔ انہوں نے محترمہ مفتی کی وادی میں غیرموجودگی پر انہیں تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ وزیر اعلیٰ نے ثابت کیا ہے کہ وہ کشمیر میں غیرمتعلق ہیں۔ عمر عبداللہ نے اپنے سلسلہ وار ٹویٹس میں کہا ’محبوبہ مفتی کی سب سے بڑی ناکامی جس پر بہت کم بحث ہوئی ہے، یہ ہے کہ جنگجوؤں کی صفوں میں شمولیت اختیار کرنے والے کشمیری نوجوانوں کی تعداد میں غیرمعمولی اضافہ دیکھنے میں آیا ہے‘۔
عمر عبداللہ نے جنگجوؤں کی صفوں میں شمولیت میں اضافے کو حزب المجاہدین کے کمانڈر برہان مظفر وانی کی جولائی 2016ء میں ہوئی ہلاکت کا شاخسانہ قرار دیتے ہوئے کہا ’مابعد برہان وانی غیض وغضب کی پیداوار۔ اتوار کو مارے گئے بیشتر جنگجو نئے ریکروٹ تھے‘۔
انہوں نے کہا ’جن 12 جنگجوؤں کی ہلاکت کی تصدیق ہوئی ہے، ان میں سے 11 مقامی کشمیری ہیں جبکہ بارہویں جنگجو کی شناخت کا سلسلہ جاری ہے۔ ایک بھی جنگجو کو غیرملکی قرار نہیں دیا گیا ہے۔ کیا دہلی میں اقتدار میں بیٹھے لوگوں میں سے کوئی اس رجحان سے پریشان نہیں؟ میں تو بہت پریشان ہوں‘۔
عمر عبداللہ نے وزیر اعلیٰ محترمہ مفتی جو قومی راجدھانی نئی دہلی کے دورے پر گئی تھیں، پر تنقید کرتے ہوئے کہا تھا ’یہ سب کچھ ہورہا ہے لیکن وزیر اعلیٰ نے اپنے دورے کو مختصر کرنے کی ضرورت کو محسوس نہیں کیا۔ ایسا کیا ضروری کام تھا کہ وزیر اعلیٰ کا وہاں موجود رہنا ضروری تھا؟‘۔ انہوں نے کہا تھا ’محبوبہ مفتی نے قبول کرلیا ہے کہ وہ کشمیر میں غیرمتعلق ہیں۔ تین مسلح تصادموں میں بھاری جانی نقصان کے چوبیس گھنٹے بعد بھی وہ واپس سری نگر لوٹ کر نہیں آئیں‘۔
وادی میں گذشتہ تین ماہ کے دوران چھ نوجوانوں نے اعلاناً عسکریت پسندوں کی صفوں میں شمولیت اختیار کی ہے۔ سیکورٹی ایجنسیوں کے مطابق کشمیری نوجوانوں کو سوشل میڈیا کے ذریعے ہتھیار اٹھانے پر تیار کیا جاتا ہے۔ ریاستی حکومت کے مطابق وادی میں سال 2015، 2016 اور 2017 کے دوران 280 نوجوانوں نے عسکریت پسندوں کی صفوں میں شمولیت اختیار کی ہے۔ 2015 میں 66، 2016 میں 88 اور 2017 میں 126 نوجوانوں نے عسکریت پسندوں کی صفوں میں شمولیت اختیار کی ہے۔ تاہم جموں وکشمیر پولیس کے اعداد وشمار کے مطابق وادی میں گذشتہ تین مہینوں کے دوران کم ازکم ڈیڑھ درجن مقامی جنگجوؤں نے سیکورٹی فورسز کے سامنے خودسپردگی اختیار کی یا اپنے گھروں کو واپس لوٹ آئے۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

کروناندھی کی حالت بگڑی –

چنئی (ایجنسیز) تملناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ اور ڈی ایم کے کے سربراہ ایم کروناندھی …

جواب دیں

%d bloggers like this: