سرورق / بین اقوامی / نورتن کمپنی بنے گی ایئر پورٹ اتھارٹی آف انڈیا –

نورتن کمپنی بنے گی ایئر پورٹ اتھارٹی آف انڈیا –

نئی دہلی، ملک کے 126 ہوائی اڈوں کی دیکھ بھال کرنے والی کمپنی ایئر پورٹ اتھارٹی آف انڈیا (اے اےآئی) نے نورتن کمپنی کی حیثیت حاصل کرنے کے لئے پبلک انٹر پرائز محکمہ کو درخواست دی ہے جس کے منظور ہونے کے بعد اس کے لئے منصوبوں کی منظوری آسان ہو جائے گی۔
سول ایوی ایشن کی وزارت کی ماتحت اےاےآئی فی الحال مني رتن کمپنی ہے۔ یہ جن ہوائی اڈوں کی دیکھ بھال کرتی ہے ان میں گھریلو اور بین الاقوامی ہوائی اڈوں کے ساتھ فوج کے ہوائی اڈوں پر بنے ٹرمینل بھی شامل ہیں۔ تمام شہری ہوائی اڈوں پر اے ٹی سی سروس اور ایئر نیوی گیشن سروسز پر اسی کی اجارہ داری ہے۔
اتھارٹی کے چیئرمین گروپرساد مهاپاترا نے’یو این آئی‘ کو بتایا کہ اےاےآئی نے پبلک انٹرپرائز محکمہ کے پاس نورتن کمپنی کے درجہ کے لئے درخواست دی ہے. انہوں نے کہا’’ہم نورتن کمپنی کے تمام پیمانوں کو پورا کرتے ہیں اور اس وجہ سے ہم نے چھ سات ماہ پہلے اس کے لئے درخواست دی ہے۔ یہ درجہ سات پیمانوں کی بنیاد پر دیا جاتا ہے۔ اس میں خالص منافع، پیداواری لاگت، فی شیئر آمدنی، نیٹ ورتھ وغیرہ شامل ہیں‘‘۔
اس سے پہلے 2011 میں بھی اےاےآئی نے نورتن کمپنی کی حیثیت حاصل کرنے کے لئے درخواست دی تھی، لیکن اس وقت اسے یہ درجہ نہیں مل پایا تھا. بعد میں 2013 میں اس مني رتن کمپنی کا درجہ دیا گیا۔ بہتر کارکردگی کرنے والی پبلک سیکٹر کی کمپنیوں کو مني رتن، نورتن اور مهارتن کمپنیوں کا درجہ دیا جاتا ہے۔ یہ درجے مختلف معیار کے بنیاد پر دیئے جاتے ہیں۔
مسٹر مهاپاترا نے بتایا کہ نورتن کمپنی کا درجہ مل جانے کے لئے اےاےآئی کے لئے سرمایہ کاری آسان ہو جائے گی۔ ابھی اس کے لئے پہلے وزارت خزانہ سے اجازت لینی ہوتی ہے اور حتمی منظوری اقتصادی امور کی کابینہ کمیٹی سے ملتی ہے۔ انہوں نے کہا’’یہ مکمل عمل ایسا ہے جیسے ہم سرکاری پیسے کا استعمال کر رہے ہیں۔نورتن کمپنی کا درجہ ملنے کے بعد صرف اتھارٹی کے بورڈ آف ڈائرکٹرز کی منظوری ہی کافی ہو گی؛ جیسے ہم آپ کے پیسے کا استعمال کر رہے ہیں‘‘۔
اےاےآئی کے چیئر مین نے بتایا کہ اگر درخواست کو پبلک انٹرپرائز محکمہ کی منظوری مل جاتی ہے تو اس کے بعد کابینہ سکریٹری کی صدارت والی ایک کمیٹی کے پاس یہ درخواست جائے گی ۔ حتمی منظوری اس کمیٹی سے ملنی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ اتھارٹی نے اگلے پانچ سال میں 21،500 کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کا منصوبہ تیار کیا ہے۔ اس میں 15،000 کروڑ روپے ایسے ٹرمینل عمارتوں کی تعمیر پر خرچ ہونے ہیں جس کا کام رواں مالی سال میں ہی شروع ہو جائے گا۔ مالی سال 2015-16 میں اےاےآئی کا ریونیو 10،824.50 کروڑ روپے اور خالص منافع 2،537.36 کروڑ روپے تھا۔ سال 2016-17 میں آمدنی بڑھ کر 12،542.01 کروڑ روپے اور خالص منافع 3،115.93 کروڑ روپے تک پہنچ گیا۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

کروناندھی کی حالت بگڑی –

چنئی (ایجنسیز) تملناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ اور ڈی ایم کے کے سربراہ ایم کروناندھی …

جواب دیں

%d bloggers like this: