سرورق / خبریں / نریندر مودی، راہل گاندھی ، نرملا سیتارمن کے خلاف مراعات شکنی کی تحریک منظور –

نریندر مودی، راہل گاندھی ، نرملا سیتارمن کے خلاف مراعات شکنی کی تحریک منظور –

نئی دہلی، اپوزیشن کانگریس پارٹی کی جانب سے لوک سبھا میں وزیر اعظم نریندر مودی اور وزیر دفاع نرملا سیتا رمن کے خلاف مراعات شکنی کے دو الگ الگ نوٹس دیئے گئے ہیں جنہیں اسپیکر سمترا مہاجن نے غور کرنے کے لئے قبول کر لیا۔

وقفہ سوال کے فورا بعد مسٹر کھڑگے نے کہا کہ وہ ضابطہ 220 کے تحت معاملہ اٹھا رہے ہیں کہ وزیر اعظم نے تحریک عدم اعتماد پر بحث کے دوران ایوان کو گمراہ کرنے والا بیان دیا ہے۔ اس دوران مسٹر جيوترادتيہ سندھیا نے وزیر دفاع نرملا سیتا رمن پر رافیل سودے کے سلسلےمیں جھوٹ بولنے کا الزام لگاتے ہوئے مراعات شکنی کی تحریک پیش کی۔

دونوں تحریکوں کو اسپیکر نے زیر غور لانےکے لئے قبول کر لیا۔ انہوں نے کہا کہ یہ نوٹس ان کے پاس زیر غور ہیں اور وہ جلد ہی ان پر مناسب فیصلہ کریں گی۔

پارلیمانی امور کے وزیر اننت کمار نے اعتراض ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ حزب اقتدار کی جانب سے صرف ایک نوٹس قبول کیا گيا ہے جبکہ اپوزیشن کی طرف سے دو نوٹس منظور کئے گے ہیں۔ تاہم، محترمہ سمترا مہاجن نے واضح کیا کہ کانگریس ارکان کی جانب سے پانچ نوٹس وزیر اعظم کے خلاف اور پانچ نوٹس وزیر دفاع کے خلاف پیش کئے گئے تھے جن میں سے انہوں نے وزیر اعظم اور وزیر دفاع یعنی دو الگ الگ افراد کے خلاف ایک ایک نوٹس کو قبول کیا ہے۔ جبکہ حزب اقتدار کی جانب سے پارٹی کے چیف وہپ انوراگ ٹھاکر سے ایک ہی شخص کانگریس صدر راہل گاندھی کے خلاف چار نوٹس موصول ہوئے ہیں۔ لہذا انہوں نے ایک نوٹس قبول کیا ہے۔ اس طرح سے ایک شخص کے خلاف ایک نوٹس ہی منظور کیا گیا ہے۔

اس کے بعد انوراگ ٹھاکر نے اپنا بیان پڑھا کہ مسٹر راہل گاندھی نے رافیل سودے پرایوان کو گمراہ کرنے والا بے بنیاد بیان دیا ہے جس پر فرانس کے صدر کو بھی بیان جاری کرکے تردید کر نی پڑی ہے جس سے ملک کی بدنامی ہوئی ہے۔ لہذا مسٹر راہل گاندھی کے خلاف کارروائی کی جانی چاہئے۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

کروناندھی کی حالت بگڑی –

چنئی (ایجنسیز) تملناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ اور ڈی ایم کے کے سربراہ ایم کروناندھی …

جواب دیں

%d bloggers like this: