سرورق / خبریں / موجودہ دور میں غالب جیسے بڑے شاعر کو یادکرنا بے حد ضروری غالب انسٹی ٹیوٹ کے زیر اہتمام منعقدہ سمینار سے ڈاکٹر گرجا ویاس کا اظہار خیال

موجودہ دور میں غالب جیسے بڑے شاعر کو یادکرنا بے حد ضروری غالب انسٹی ٹیوٹ کے زیر اہتمام منعقدہ سمینار سے ڈاکٹر گرجا ویاس کا اظہار خیال

اودے پور: (یو این آئی)پوری دنیا میں ہمارے ادیب اور شاعر غالب پر لکھ رہے ہیں اور گفتگو بھی کر رہے ہیں مگر آج بھی ہمیں یہ احساس ہوتا ہے کہ اب بھی غالب کی شاعری پر بہت کچھ کہا جا سکتا ہے ۔جب میں طالبِ علم تھی تو میں دیوانِ غالب کو پڑھنے کے لئے اپنی کلاس تک چھوڑ دیتی تھی۔ہم جیسے سیاست دانوں کو بھی ہر وقت غالب کی ضرورت ہوتی ہے اور ہم جب بھی پریشانیوں میں مبتلا ہوتے ہیں تو غالب کو اپنے سے قریب پاتے ہیں۔ ان خیالات کا اظہار’غالب کا تصورِ نشاط و غم‘کے عنوان سے قومی سمینارکی صدارت کرتے ہوئے سابق مرکزی وزیر ڈاکٹر گرجا ویاس نے کیا۔انہوں نے مزید کہا کہ غالب نے اپنے عہد ہی میں نئے ہندوستان کی تصویر دیکھ لی تھی جس کا اظہار وہ اپنے خطوط اور شاعری میں برابر کرتے ہیں۔آپ نے مزید کہا کہ جب بھی میں دیوانِ غالب کا مطالعہ کرتی ہوں تو میرا یہ جی چاہتا ہے کہ میں اس دیوان کو پڑھتے پڑھتے ہی اس دنیا سے نکل کر دوسری دنیا میں چلی جاؤں۔راجستھان کے معروف ماہرِ تعلیم اور سائنس کے پروفیسر جے کے تائلیہ نے کہا کہ غالب کے کلام کو پڑھنا ہم اپنے لئے باعثِ عزت سمجھتے ہیں۔ اپنے ذاتی تجر بات کو بیان کرتے ہوئے آپ نے کہا کہ جب ہم کالج میں غالب کو پڑھتے تھے تو ہمیں یہ پتہ نہیں چلتا تھا کہ غالب کس مذہب سے تعلق رکھتے ہیں۔بس ہم اتنا جانتے تھے وہ ایک عظیم شاعر تھے اور ہر وقت ہماری زندگی کے قریب تھے ۔آج کی نوجوان نسل ماڈرن ٹکنالوجی سے وابستہ ہے مگر غالب کے اشعار کو پڑھنا اپنے لئے باعثِ فخر سمجھتی ہے ۔سمینارکا کلیدی خطبہ پیش کرتے ہوئے الہ آباد یونیورسٹی کے پروفیسر علی احمد فاطمی نے کہا کہ ’’غالب مشکل ، نازک اور پیچیدہ شاعر تھے ، اُن کی زندگی تضادات و تصادمات کا شکار رہی اور یہی تضادات اُن کی شاعری میں بھی نظر آتے ہیں۔اُن کے یہاں غم بھی ہے نشاط بھی ، اُن کے یہاں ماضی کا کرب بھی ہے اور مستقبل شناسی بھی ،غالب کے یہاں مسجد بھی ہے اور کلیسا بھی ،مشرق بھی ہے اور مغرب بھی ، غالب کے یہاں انتشار و اضطراب کا ایک سیلاب ہے لیکن وہ اس کو اپنے مخصوص تخلیقی وجدان میں ڈھال کر تصورِ نشاط و جمال میں بدل دیتے ہیں۔معروف دانشور ریاض تحسین نے کہا کہ اودے پور کی سر زمین پر پہلی مرتبہ اتنے بڑے پیمانے پر غالب کو یاد کیا جا رہا ہے اس کے لئے میں غالب انسٹی ٹیوٹ کو مبارک باد پیش کرتا ہوں۔غالب انسٹی ٹیوٹ کے ڈائرکٹر رضا حیدر نے اپنے استقبالیہ کلمات میں کہا کہ غالب انسٹی ٹیوٹ کے مقاصد میں یہ بھی ہے کہ ہم ملک کے مختلف شہروں میں غالب کو یاد کریں۔اودے پور میں غالب کو یاد کرنے کا مقصد اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے ۔موجودہ دور میں غالب کو یاد کرنا اس لئے بھی ضروری ہے کہ غالب ہماری تہذیب ،ہمارے ادب اور ہماری ثقافت کا ایک بڑا سمبل ہے لہٰذا ہماری کوشش ہوگی کہ ملک کے ہر شہر میں غالب کو یاد کرکے اس عظیم شاعر کو خراجِ عقیدت پیش کریں۔خیال ر ہے کہ غالب انسٹی ٹیوٹ کے زیرِ اہتمام وزارتِ ثقافت ،حکومتِ ہند اور ادبی سنگم، اودے پور کے زیرِ اہتمام اودے پور کا اہم ادبی، ثقافتی مرکز کمبھا سبھا گار میں غالب کا تصورِ نشاط و غم کے عنوان سے 5-6 مئی کو یہ دوروزہ قومی سمینار منعقد کیا گیا ۔سمینار کی کنوینر اور اہم ناول نگار ڈاکٹر ثروت خان نے پورے جلسے کی نظامت اور اظہارِ تشکر کا فریضہ انجام دیتے ہوئے کہا کہ اودے پور جیسے تاریخی اور ثقافتی شہر میں ادیبوں، شاعروں اور دانشوروں کے ذریعہ غالب کو خراجِ عقیدت پیش کرنا ہمارے لئے کسی خواب سے کم نہیں ہے جب بھی اودے پور کی ثقافتی تاریخ لکھی جائے گی مورخ اس جلسے کا ذکر ضرورکرے گا جس کے لئے ہم غالب انسٹی ٹیوٹ کے ہمیشہ شکر گزار رہیں گے ۔اس افتتاحی اجلاس کے اختتام سے پہلے ممتاز غزل سنگر پروفیسر پر یم بھنڈاری نے غالب کی خوبصورت غزل گا کر ماحول کو خوشگوار بنایا۔ 6 ؍مئی کو صبح 10 بجے سے شام 6بجے تک سمینار کا ادبی اجلاس منعقد کیا گیا جس میں ڈاکٹر خالد علوی، ڈاکٹر حسین رضا حان، ڈاکٹر محمد حسین،ڈاکٹر تسنیم خانم،ڈاکٹر شاہد پٹھان ، ڈاکٹر حسن آرا، ڈاکٹر شبنم خان،ڈاکٹر سعید روشن،ہریش تلریجا،ڈاکٹر شیبا حیدر ، ڈاکٹر شہناز یوسف،ڈاکٹر ثروت خان ، محمد شاہد زیدی، محمد شاکر کے علاوہ مختلف اساتذہ نے موضوع کے تعلق سے مقالہ خوانی کی۔خصو صاً ڈاکٹر خالد علوی نے جلسے کی صدارت اور مقالہ خوانی میں نہایت ہی پُر مغز اور علمی گفتگو کی ۔ اختتامی اجلاس میں جگمال سنگھ ، (مہاراول،بانس واڑا) پروفیسر جے کے تائلیہ،پریتا بھارگو(ڈی آئی، جی ) ،پرسنّا اور مشتاق چنچل نے اظہارِ خیال کیا ۔
ان دو دنوں کے جلسوں میں اودے پور کی اہم سیاسی ،سماجی شخصیات کے علاوہ بڑی تعداد میں اساتذہ ، صحافی،ڈاکٹرس کے علاوہ مختلف علوم و فنون کے اہلِ علم موجود تھے ۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

کروناندھی کی حالت بگڑی –

چنئی (ایجنسیز) تملناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ اور ڈی ایم کے کے سربراہ ایم کروناندھی …

جواب دیں

%d bloggers like this: