سرورق / خبریں / شہر کو کچرے سے پاک کرنے کیلئے ایک عوامی مہم-

شہر کو کچرے سے پاک کرنے کیلئے ایک عوامی مہم-

بنگلورو۔بروہت بنگلورو مہا نگرا پالیکے(بی بی ایم پی) کو اپنے علاقہ سے کچرا ہٹانے کے لئے بار بار کی یاددہانیاں ، بہرے کانوں پر پڑ جانے کے بعد مشرقی بنگلور کے مکینوں نے کچرے کی نکاسی کے کام کو خود اپنے ہاتھوں میں لینے کا ایک اقدام کیا ہے۔ونایک نگر ، کے آر گارڈن اور اس کے اطراف کے علاقوں میں کچرے کی وصولی کا کام بی بی ایم پی کرم چاریوں کی طرف سے صرف ہفتہ میں ایک مرتبہ ہوتا ہے، اس صورت حال سے ناراض شہریوں نے معاملہ کو خود اپنے ہاتھوں میں لینے کا فیصلہ کر لیاہے۔اس علاقہ کے مکینوں کی ایک جماعت نے علاقہ میں گھر گھر پہنچ کر لوگوں میں سوکھے کچرے کے انتظام اور گیلے کچرے کی کھاد کے تعلق سے بیداری پیدا کرنے کی مہم کا آغاز کیا ، اس مہم میں کے آر گارڈن کے مکینوں کی ایک گروپ گھروں تک پہنچ کر انفرادی طور پر لوگوں کو معلومات فراہم کرتے ہوئے دیکھی گئی ۔علاقہ کے ایک مکین راجیندرا اوپرے نے نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ’’وارڈ نمبر 113 میں کچرے کی وصولی کا کام پچھلے ایک سال سے نہایت ہی بے ترتیب رہا ہے، اس کے نتیجہ میں ہم پورا پورا ہفتہ راستوں کے کنارے کوڑا کرکٹ کے ڈھیر پڑے ہوئے دیکھتے ہیں، یہ صورت حال علاقہ کے سبھی مکینوں کے لئے تشویش کا باعث بنی ہوئی ہے‘‘۔مکینوں نے یہ بھی شکایت کی کہ علاقہ کے ٹھیکہ دار سے بات چیت کے بعد اس مسئلہ کو عارضی طور پر حل کیا گیا تھالیکن کچھ ہی ہفتوں کے بعد حالات دوبارہ اسی نہج پر پہنچ گئے۔اوپرے نے بتایا کہ ’’ہم لوگ اس بات کو یقینی بنانے کے لئے کہ کوئی بھی شخص یہاں راستوں پر کوڑا کرکٹ ڈالنے نہ پائے ، راتوں کے اوقات میں علاقہ کی نگرانی کا کام بھی کیا تھا لیکن اس سے کوئی فائدہ نہیں ہوا، لہٰذا ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ لوگوں میں بیداری اور جانکاری پیدا کریں اور علاقہ کو پاک و صاف رکھنے کی ذمہ داری خود اپنے کاندھوں پر لے لیں‘‘۔ان رضاکاروں نے گھر گھر پہنچ کر انفرادی طور پر لوگوں کو بتایا کہ وہ کس طرح تر کچرے کو استعمال کرتے ہوئے کھاد تیار کر سکتے ہیں اور خشک کچرے کو کس طرح قریب میں موجود کچرے کے نکاسی مرکز تک پہنچایا جا سکتا ہے۔گھر والوں کو انہوں نے متعلقہ بی بی ایم پی افسران کے فون نمبر بھی فراہم کئے جن سے ، کچرے کی وصولی میں غفلت پر رابطہ کیا جا سکتا ہے۔اس گروپ کے ایک اور رکن اراوندا بدری ناتھ نے بتایا کہ ، اس مہم کے پہلے ہی دن ایسے پانچ اپارٹمنٹوں تک ہم لوگ پہنچے تھے جن میں سے ہر ایک میں پچاس خاندان رہتے ہیں۔اس کے علاوہ اشوکا اوینیو کے مکینوں کو بھی اس اقدام کے تعلق سے بتایا گیا تھا۔بدری ناتھ کا کہنا ہے کہ ’’کئی مرتبہ کچرے کی نکاسی کے مراکز بند رہتے ہیں اور کبھی صفائی کرم چاری ہرتال پر چلے جاتے ہیں۔ان تمام رکاوٹوں کے باوجود ہم چاہتے ہیں کہ ہمارے علاقہ کو پاک و صاف اور کچرے سے محفوظ رکھ سکیں‘‘۔انہوں نے مزید بتایا کہ اس مہم کو آگے بڑھاتے ہوئے مختلف محلوں میں مشاورتی نشستیں منعقد کی جائیں گی، علاقہ کی مختلف اسکولوں کی انتظامیہ سے بھی ملاقاتیں کی جائیں گی اور تمام مکینوں کو شامل کرتے ہوئے روڈ شو بھی منعقد کئے جائیں گے۔انہوں نے کہا کہ ’’ہم اس بات کی کوشش کر رہے ہیں کہ علاقہ کے لوگوں میں برتاؤ کی تبدیلی پیدا کریں، ہم جس بات کو لوگوں کے ذہنوں میں بٹھانا چاہتے ہیں وہ یہ کہ چاہے کچھ بھی ہو جائے ہمیں راستوں پر کوڑا کرکٹ اور کچرا نہیں پھینکنا چاہئے‘‘۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

کروناندھی کی حالت بگڑی –

چنئی (ایجنسیز) تملناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ اور ڈی ایم کے کے سربراہ ایم کروناندھی …

جواب دیں

%d bloggers like this: