سرورق / بین اقوامی / روحانی کا یورینیم کی ’لا محدود‘ افزودگی دوبارہ شروع کرنے کا اعلان

روحانی کا یورینیم کی ’لا محدود‘ افزودگی دوبارہ شروع کرنے کا اعلان

تہران،(یو این آئی)امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے ایران کے ساتھ جوہری معاہدہ سے الگ ہونے کے اعلان کے بعد متعد د ممالک نے امریکی صدر کے فیصلہ پر مایوسی کا اظہار کیا ہے۔ایک مغربی سفارت کار نے ٹرمپ کے اس فیصلے پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ امریکی صدر کا یہ فیصلہ ان کے یوروپی اتحادیوں کو سب سے زیادہ نقصان پهنچائے گا۔وہیں براک اوبامہ نے ٹرمپ کے فیصلے کو ’راستہ سے بھٹک جانے کی غلطی ‘ قراردیا ہے۔ایران کے صدر حسن روحانی نے امریکی صدر کے اعلان کے بعد کہا ہے کہ وہ اس جوہری معاہدے پر قائم رہیں گے اور اس حوالے سے چین، روس اور دیگر یوروپی ممالک سے مشاورت کریں گے۔حسن روحانی نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے خطاب کے فوراً بعد ہی سرکاری ٹی وی پر خطاب کرتے ہوئے ایرانی عوام سے کہا کہ وہ اس فیصلہ کے معاشی نتائج کی فکر نہ کریں۔ان کا کہنا تھا کہ’ ’اب سے یہ معاہدہ ایران اور پانچ ممالک کے درمیان ہے اور ہم کسی فیصلے کا اعلان کرنے سے قبل چند ہفتے انتظار کریں گے اور 2015 کے معاہدے میں شامل دیگر ممالک برطانیہ، فرانس، جرمنی، روس، چین اور یوروپی یونین کے ساتھ بات کریں گے۔‘‘بی بی سی کے مطابق حسن روحانی نے کہا کہ ایران امریکی صدر کے جوہری معاہدے سے نکلنے کے فیصلے کے جواب میں یورینیم کی ’لا محدود‘ افزودگی دوبارہ شروع کر سکتا ہے۔انھوں نے کہا کہ ’’میں نے ایرانی اٹامک انرجی آرگنائزیشن کو مستقبل میں کارروائیوں کے لیے تمام ضروری اقدامات اٹھانے کی ہدایت کی ہے تاکہ ہم لامحدود صنعتی افزودگی دوبارہ شروع کر سکیں۔‘‘ایرانی صدر نے ڈونلڈ ٹرمپ کے اس فیصلے کو ’ایران کے خلاف نفسیاتی جنگ‘ قرار دیا ہے۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

کروناندھی کی حالت بگڑی –

چنئی (ایجنسیز) تملناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ اور ڈی ایم کے کے سربراہ ایم کروناندھی …

جواب دیں

%d bloggers like this: