سرورق / خبریں / راہل کا وزیر اعظم پر نشانہ، کہا، مودی صرف آر ایس ایس کی سنتے ہیں –

راہل کا وزیر اعظم پر نشانہ، کہا، مودی صرف آر ایس ایس کی سنتے ہیں –

نئی دہلی، کانگریس کےقومی صدر راہل گاندھی نے مودی حکومت پر هنرمندوں کو نظر انداز کرنے کا الزام لگاتے ہوئے آج کہا کہ وزیر اعظم نریندر مودی صرف راشٹریہ سویم سیوک سنگھ (آر ایس ایس) کی سنتے ہیں اور کسانوں، پسماندہ طبقات، کاریگروں، ملازمین اور نوجوانوں کے مسائل کو نظر انداز کر دیتے ہیں۔ مسٹر گاندھی نے کانگریس پسماندہ طبقے ڈویژن کی جانب سے یہاں منعقد آل انڈیا کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مودی حکومت نے پسماندہ طبقے کے سماج کو سب سے زیادہ نظر انداز کیاہے۔انہیں ان کا حق نہیں دیا گیا ہے۔ محنت پسماندہ طبقے کا کسان اور ہنر مند شخص کرتا ہے اور اس کے ہنر کا فائدہ كوئی دوسرا شخص اٹھا لیتا ہے۔ یہ بی جے پی حکومت کی پالیسی کا حصہ بن چکا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مودی حکومت میں مزدوروں کونظرانداز کیا گیا ہے اور ان کے ہنر اور مہارت كو اہمیت نہیں دی گئی ہے۔ هنرمندو ں کو کمرے میں بند کر رکھا جاتا ہے اور اس کےہنر کا فائدہ کوئی دوسرا اٹھا رہا ہے۔کسان اور مزدور دن بھر محنت کرتے ہیں اور فائدہ ان 15-20 لوگوں کو حاصل ہوتاہے جو بی جے پی کو موٹي رقم دیتے ہیں۔ حکمت عملی صاف ہے کہ پورا کا پورا فائدہ انہیں 15-20 لوگوں کو ملے۔ ایک سال میں مودی حکومت نے صنعت کاروں کو 2.5 لاکھ کروڑ روپے دیئے ہیں لیکن کسان کو ایک روپیہ نہیں دیا اور نہ ہی ان کا قرض معاف ہوا۔
کانگریسی صدر نے کہا کہ کانگریس ہمیشہ پسمانہ طبقات کے ساتھ کھڑی رہی ہے۔ ان کی پارٹی کے 70 سال کی تاریخ ہے کہ پسماندہ طبقات کو اس نے مکمل عزت واحترام دیا ہے لیکن مودی حکومت کے آنے کے بعد پسماندہ طبقے کے لوگوں کو خودکے وجود کو بچانے کے لئے جدوجہد کرنا پڑ رہا ہے۔ مسٹر گاندھی نے ملک بھر سے آئے پسماندہ طبقے کے لوگوں کو یقین دہانی کرائی کہ کانگریس انہیں ان کا پورا حق دے گی۔ انہوں نے کہا کہ آپ کو تھوڑی سی جگہ نہیں دیں گے۔آپ کا جو حق ہے کانگریس پارٹی آپ کا وہ حق آپ کو پورا دے گی۔ ہم پسماندہ طبقے کو ان کی آبادی کے حساب سے لوك سبھا، راجیہ سبھا، اسمبلیوں میں لانا چاہتے ہیں۔ انہوں نے الزام لگایا کہ مودی حکومت میں آر ایس ایس کے علاوہ کسی اور کی نہیں سنی جاتی۔ یہ بات خود اس کےایم پی کہتے ہیں کہ ان کی بات نہیں سنی جاتی ہے۔پارلیمنٹ کے احاطے میں بی جے پی کے ممبران پارلیمنٹ نے ان سے کہا کہ مسٹر مودی کے سامنے وہ ایک لفظ بھی نہیں بول سکتے۔ مسٹر مودی صرف آر ایس ایس کی سنتے ہیں اور آر ایس ایس کے علاوہ وہاں کسی دوسرے کی اہمیت نہیں ہے۔ او بی سی، کسان، قبائلی یا کسی دوسرے کی نہیں سنی جاتی۔
کانگریسی صدر نے کہا کہ جو حالات سامنے ہیں اسے دیکھتے ہوئے لگتا ہےکہ ایک طرح سے ملک بھارتيہ جنتا پارٹی کے دو تین رہنماؤں اور آر ایس ایس کا غلام بن گیا ہے۔ سات آٹھ ماہ بعد مسٹر مودی، بی جے پی صدر امت شاہ اور آر ایس ایس سربراہ موہن بھاگوت كو سمجھ آ جائے گا کہ ہندوستان کو تین لوگ نہیں بلکہ ملک کی عوام ہی چلا سکتی ہے۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

بھونگیر حادثہ۔تلنگانہ کے وزیراعلی کا اظہار افسوس

حیدرآبادتلنگانہ کے وزیراعلی کے چندرشیکھر راو نے ضلع یادادری بھونگیر میں پیش آئے سڑک حادثہ …

جواب دیں

%d bloggers like this: