سرورق / خبریں / خدا کے نام بچے کا خط-

خدا کے نام بچے کا خط-

ایک اسکول ٹیچر نے کلاس کے بچوں کو ہوم ورک دیا کہ وہ ایک مضمون لکھ کر لائیں کہ وہ بچے کیا چاہتے ہیں کہ خدا ان کے لئے کرے سب بچوں نے مضمون لکھا ۔بچوں کے مضمون چیک کرتے وقت ایک مضمون پڑھ کر ٹیچر کی آنکھوں میں آنسو آگئے ٹیچر نے مضمون لکھنے والے بچے کے والدین کو بلایا اور مضمون پڑھنے کو دیا۔ بچے کے باپ نے مضمون پڑھنا شروع کیا۔
’’۔۔۔اے خدا!آج میں تجھ سے بہت خاص دعا مانگتا ہوں اور وہ یہ ہے کہ مجھے ٹیلی ویژن بنا دے۔ میں ٹی وی کی جگہ لینا چاہتا ہوں۔ ایسے ہی جینا چاہتا ہوں جیسے میرے گھر میں ٹی وی جی رہا ہے۔میں ٹی وی کی جگہ لے کر بہت خاص بن جا ؤنگا۔ میرے ماں باپ ،میری بہن میرے ہی ارد گرد بیٹھے رہیں گے ۔جب میں ٹی وی کی طرح بول رہا ہونگا تو سب میری باتیں بڑی توجہ سے سن رہے ہونگے ۔میں تمام گھر والوں کی توجہ کا مرکز بنا رہونگا اور بنا رکے لوگ مجھے ہی دیکھتے سنتے رہیں گے۔ کوئی بھی مجھ سے سوال جواب نہیں کرے گا اور نہ ہی کوئی مجھے ڈانٹ ڈپٹ ،مار پیٹ کرے گا ۔میں خاص اور احتیاط کے ساتھ استعمال کیا جاونگا جیسے ٹی وی کو استعمال کرتے ہوئے احتیاط کی جاتی ہے ۔ٹی وی خراب ہو جائے تو فورا میکانک کو بلایا جاتا ہے ۔اب میری طبیعت خراب ہو جائے تو میڈیکل اسٹور سے کوئی بھی دوا لے لی جاتی ہے۔ میری ٹیوشن کی فیس دو مہینے کی باقی ہے مگر ٹی وی کیبل کا پیسہ ہر مہینے دیا جاتا ہے۔ میں اگر گھر دیر سے آؤ ں تو پر واہ نہیں مگر ٹی وی پر چینل نہیں آرہا ہے تو کیبل آپریٹر کو بار بار فون کیا جاتا ہے۔ ٹی وی بن جانے کے بعد مجھے نظر انداز کرنے کی بجائے پورا گھر میری طرف متوجہ رہے گا ۔ابو آفس سے آتے ہی مجھے دیکھیں گے۔ امی کھانا پکاتے ،برتن پانی کرتے مجھے دیکھیں گی۔ بہن اسکول کا ہوم ورک کرتی بھی رہے گی مجھے بھی دیکھتی رہے گی یہاں تک کہ میں خود اسکول سے آنے کے بعد ٹی وی پر کارٹون چینل دیکھنے کیلئے ریموٹ تلاش کرتا ہوں ٹی وی بن جانے کے بعد مجھے خود کو تلاش کرنے کی ضرورت نہیں پڑے گی۔اے خدا ! میں نے تجھ سے زیادہ کچھ نہیں مانگا۔ بس یہ مانگا ہے کہ مجھے ٹی وی بنا دے۔۔۔‘‘
مضمون پڑھتے ہوئے بچے کے باپ کی آنکھوں میں آنسو آگئے بچے کی ماں بھی رو پڑی اور کہا ۔۔۔’’ اے خدایا کتنا مایوس بچہ ہے۔بیچارے کے ساتھ اس کے گھر میں اس کے والدین اور بہن کی طرف سے کتنا براسلوک ہوتا ہے۔ ایسے کیسے لا پرواہی کرتے ہیں یہ لوگ بچے کے ساتھ۔۔۔!‘‘ باپ نے کہا امیر النساء بیگم یہ مضمون ہمارے اپنے بیٹے محمدزید نے لکھا ہے ۔
آصف پلاسٹک والا۔ربانی ٹاور، مدنپورہ ،ممبئی ۱۱۔9323793996

Leave a comment

About saheem

Check Also

کروناندھی کی حالت بگڑی –

چنئی (ایجنسیز) تملناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ اور ڈی ایم کے کے سربراہ ایم کروناندھی …

جواب دیں

%d bloggers like this: