سرورق / خبریں / حکومت ملک کی سلامتی سے سمجھوتہ کر رہی ہے : کانگریس

حکومت ملک کی سلامتی سے سمجھوتہ کر رہی ہے : کانگریس

نئی دہلی، کانگریس نے جھارکھنڈ میں گزشتہ روز ہونے والے نکسلی حملے میں چھ جوانوں کے شہید ہونے کے واقعہ پر گہرے رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے آج مودی حکومت پر جوانوں کو بہتر ہتھیار دستیاب نہیں کرانے کا الزام عائد کیا اور کہا کہ ملک کی داخلی سلامتی سے کھلواڑ کیا جا رہا ہے۔

کانگریس کے ترجمان پرینکا چترویدی نے یہاں پارٹی کی معمول کی پریس بریفنگ میں کہا کہ فوج کے پاس موجود ہتھیاروں میں صرف آٹھ فیصد ہتھیار ہی جدید ہیں اور 24 فیصد عام نوعیت کے ہیں جبکہ 68 فیصد پرانے پڑ چکے ہیں۔ جوان جن ہتھیاروں کا استعمال کر رہے ہیں، ان میں بہت سے کسی کام کے نہیں ہیں اور ماہر ین انہیں میوزیم میں رکھنے کا مشورہ دے رہے ہیں لیکن مودی حکومت انہی کے بل پر سکیورٹی کا دم بھر رہی ہے۔

انہوں نے الزام لگایا کہ مودی حکومت ملک کی سلامتی کے تعلق سے سنجیدہ نہیں ہے اور یہی وجہ ہے کہ یہ حکومت کئی بار وزیر دفاع بدل چکی ہے۔ انہوں نے وزیر اعظم نریندر مودی پر شہیدوں کے نام پر سیاسی روٹیاں سینکنے کا الزام لگاتے ہوئے کہا کہ مودی حکومت مسلسل ملک کی سلامتی کے لئے سنجیدہ نہیں ہے، اس لئے وہ مسلسل دفاعی بجٹ میں کمی کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ 2018-19 کا دفاعی بجٹ جی ڈی پی کا 1.58 فیصد ہے اور یہ 1962 کے دفاعی بجٹ سے بھی کم ہے۔

ترجمان نے کہا کہ پارلیمنٹ کی اسٹینڈنگ کمیٹی نے بھی کہا ہے کہ فوج کی ضرورت کو پورا کیا جانا چاہئے اور فوج کو اس کی ضرورت کے مطابق بجٹ دیا جانا چاہئے۔ انہوں نے مودی حکومت پر اس معاملے میں سیاست کرنے کا الزام لگاتے ہوئے کہا کہ فوج کو کافی بجٹ نہیں دیا جا رہا ہے۔ بجٹ کی کمی کی وجہ سے جوانوں کے پاس ضرورت کے مطابق ہتھیار نہیں ہیں۔ حکومت کی اس ناکامی کا خمیازہ ملک کے فوجیوں اور سلامتی دستے کو جان دے کر بھگتنا پڑ رہا ہے۔

محترمہ چترویدی نے کہاکہ “حکومت کی پالیسی کی وجہ سے بڑی تعداد میں ملک کے جوان شہید ہو رہے ہیں۔ ہماری فوج کے جوان اور نیم فوجی دستوں کے جوان ملک کی سلامتی کے لئے لڑتے ہوئے ہر دن شہید ہو رہے ہیں لیکن مودی حکومت اس بارے میں سنجیدہ نظر نہیں آ رہی ہے۔ سال 2014 سے اب تک جموں و کشمیر میں 280 جوان شہید ہو چکے ہیں اور 2015 سے 243 جوان نکسلی حملوں میں شہید ہوئے ہیں۔ کل ہی ہمارے چھ جوان نکسلی حملے میں شہید ہو گئے جس سے ثابت ہوتا ہے کہ مودی حکومت سکیورٹی کے طریقہ کار پر توجہ نہیں دے رہی ہے”۔
کانگریس کے ترجمان نے کہا کہ وزیر اعظم فوج کے لئے جدید ہتھیاروں کے مسئلے سے بخوبی آگاہ ہیں لیکن اس پر توجہ نہیں دی جا رہی ہے۔ پارلیمانی کمیٹی کی رپورٹ میں بھی اس پر تشویش ظاہر کی گئی ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ فوج نے حکومت سے 33066.66 کروڑ روپے کی مانگ کی تھی اور 34209.01 کروڑ روپے تجدیدکاری کے لئے مانگے تھے لیکن وزارت خزانہ نے اضافی مانگ پر کوئی توجہ نہیں دی۔
انہوں نے میک ان انڈیا کو ایک جھنجھونا قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس کے لئے کافی بجٹ مختص کرنے کا بندوبست نہیں کیا گیا ہے جس کی وجہ سے کئی اسکیمیں جس طرح سے شروع ہوئی تھیں، اسی طرح بند ہونے کے دہانے پر ہیں۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

کانگریس پارٹی سے مجھے کوئی بیزارگی نہیں: کمار سوامی

رام نگرم: مجھے کانگریس پارٹی کی طرف سے کوئی الجھن نہیں ہے اور نہ ہی …

جواب دیں

%d bloggers like this: