سرورق / خبریں / جموں وکشمیر: بچیوں کے ساتھ جنسی زیادتی کے قصورواروں کیلئے سزائے موت، حکومت نے آرڈیننس تیار کرلیا –

جموں وکشمیر: بچیوں کے ساتھ جنسی زیادتی کے قصورواروں کیلئے سزائے موت، حکومت نے آرڈیننس تیار کرلیا –

سری نگر ، جموں وکشمیر حکومت نے کمسن بچیوں کے ساتھ جنسی زیادتی کرنے والوں کے لئے سزائے موت کی تجویز والے آرڈیننس کا مسودہ مرتب کرلیا ہے۔ اسے امکانی طور پر منگل کو ہونے والی ریاستی کابینہ کی میٹنگ میں منظور کرلیا جائے گا۔
کابینہ سے منظوری ملنے کے بعد مسودے کو ریاستی گورنر نریندر ناتھ ووہرا کے پاس بھیجا جائے گا جن کی منظوری ملنے کے ساتھ ہی کمسن بچیوں کے ساتھ جنسی زیادتی کرنے والوں کے لئے سزائے موت کا قانون ریاست جموں وکشمیر میں نافذ ہوجائے گا۔
واضح رہے کہ جموں کے ضلع کٹھوعہ میں رواں برس جنوری میں پیش آئے دل دہلانے والے آٹھ سالہ کمسن بچی کی عصمت دری اور قتل واقعہ کے خلاف دنیا بھر میں بالعموم جبکہ ملک میں بالخصوص ناراضگی دیکھی گئی۔ تاہم کٹھوعہ واقعہ پر ناراضگی کی شدید لہر کے باوجود گذشتہ چند ہفتوں کے دوران ملک کے مختلف حصوں میں بچیوں کے ساتھ جنسی زیادتی کے واقعات سامنے آئے جس کے بعد مرکزی حکومت نے ایسے واقعات کے قصورواروں کو سخت سے سخت سزا دینے والا قانون بنانے کا اعلان کیا۔
صدر جمہوریہ ہند رام ناتھ کووند نے اتوار کے روز آبروریزی کے بڑھتے جرائم کو روکنے کے لئے سخت دفعات والے فوجداری قانون ترمیمی آرڈیننس کو منظوری دی جس کے ساتھ ہی اسے نافذکر دیا گیا۔ مرکزی کابینہ نے آرڈیننس کو ہفتہ کے روز منظوری دی کر اسے صدر کے پاس بھیجا تھا۔
سرکاری ذرائع نے بتایا کہ ریاستی حکومت بچیوں کے ساتھ جنسی زیادتی کرنے والے کے لئے سزائے موت کا قانون منظور کرنے کے لئے اپنا ایک الگ آرڈیننس لارہا ہے۔ انہوں نے بتایا ’ریاست کو دفعہ 370 کے تحت خصوصی پوزیشن حاصل ہے۔ اس کے چلتے مرکزی قوانین ریاست میں براہ راست نافذ نہیں ہوتے ہیں۔ ریاست کا اپنا کرمنل پروسیجر کوڈ بھی ہے۔ اس کے پیش نظر ریاستی حکومت اپنا الگ آرڈیننس لارہا ہے‘۔
ریاست میں قانون و انصاف کے وزیر عبدالحق خان نے بتایا کہ آرڈیننس کا مسودہ تیار کرلیا گیا ہے اور اسے ریاستی کابینہ کی اگلی میٹنگ میں منظوری دی جائے گی۔ انہوں نے بتایا ’مسودہ تیار کرلیا گیا ہے۔ اس کا بنیادی نکتہ یہ ہے کہ 12 سال سے کم عمر بچیوں کے ساتھ جنسی زیادتی کے قصورواروں کو موت کی سزا دی جائے گی‘۔ مسٹر خان نے بتایا کہ آرڈیننس کو کابینہ سے منظوری ملنے کے بعد توثیق کے لئے گورنر کے پاس بھیجا جائے گا۔ انہوں نے بتایا کہ ریاست کے آرڈیننس کا مسودہ مرکزی حکومت کی طرف سے جاری کردہ آرڈیننس کے طرز پر ہوگا۔
واضح رہے کہ ریاستی وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے کٹھوعہ واقعہ کے تناظر میں کہا تھا کہ اُن کی حکومت ایک نیا قانون لائے گی جس میں معصوم بچوں کی عصمت دری میں ملوث افراد کے لئے موت کی سزا لازمی ہوگی ،تاکہ کٹھوعہ کی معصوم بچی کے بعد کوئی دوسری بچی درندگی کا شکار نہ بنے اور یہ اس نوعیت آخری واقعہ ہو۔ انہوں نے کہا تھا کہ وہ معصوم بچی کی وحشیانہ عصمت دری اور قتل میں ملوث افراد ،جنہوں نے انسانیت کو شرمسار کرنے والا جرم انجام دیا ہے،کو سخت سے سخت اور مثالی سزا دلائیں گی۔
محترمہ مفتی نے اپنے دو سلسلہ وار ٹویٹس میں کہا تھا ’میں پوری قوم کو یقین دلانا چاہتی ہوں کہ میں نہ صرف کٹھوعہ کی کمسن بچی کو انصاف دلانے کے لئے وعدہ بند ہوں بلکہ میں اس دردناک واقعہ میں ملوث افراد ،جنہوں نے انسانیت کو شرمسار کرنے والا جرم انجام دیا ہے،کو سخت سے سخت اور مثالی سزا دلاوں گی‘۔ انہوں نے کہا تھا ’ہم کبھی بھی دوسرے بچوں کو اس طرح کے حالات سے گزرنے نہیں دیں گے۔ہم ایک نیا قانون لائیں گے جس میں معصوم بچوں کی عصمت دری میں ملوث افراد کے لئے موت کی سزا لازمی ہوگی ،تاکہ معصوم آصفہ کے بعد کوئی دوسری بچی درندگی کا شکار نہ بنے اور یہ اس نوعیت آخری واقعہ ہو‘۔
نیشنل کانفرنس کے کارگذار صدر عمر عبداللہ نے محترمہ مفتی کے اعلان کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا تھا ’یہ بہت اچھا ہے کہ محبوبہ مفتی اپوزیشن جماعتوں کی تجاویز کو سننے کے لئے تیار ہیں۔ میرے ساتھی دیویندر سنگھ رانا (نیشنل کانفرنس صوبائی صدر جموں) نے بچوں کی عصمت دری کے ملوثین کو موت کی سزا دلانے والے قانون کے لئے اسمبلی میں بل پیش کرنے کا اعلان کیا تھا۔ محترمہ مفتی نے اس تجویز کو قبول کرتے ہوئے باضابطہ اعلان بھی کیا ہے‘۔
وزیر اعلیٰ نے گذشتہ روز بچیوں کی عصمت ریزی کے قصورواروں کو موت کی سزا دینے کے مرکزی کابینہ کے فیصلہ کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا کہ اس فیصلے سے ملک میں خواتین اور کمسن بچیوں کے خلاف جرائم پرقابو پانے میں کافی حد تک مدد ملے گی۔ انہوں نے مرکزی کابینہ کی طرف سے موجودہ قوانین میں سخت ترامیم کرنے کا خیرمقدم کرتے ہوئے کہا کہ اس عمل سے عصمت دری کے معاملات کی تحقیقات اور تیز تر پیروی ممکن ہوسکے گی اور قصورواروں کو بھی سخت سزا دی جاسکے گی۔
محبوبہ مفتی نے خواتین کے خلاف جرائم کا حصہ نہ بننے کے لئے سماجی بیداری پیدا کرنے کی ضرورت پر بھی زور دیا۔ انہوں نے کہا کہ اس کے ساتھ ساتھ خواتین کو عزت دینے اور ان کے حقوق کے بارے میں بیداری پیدا کی جانی چاہئے تا کہ خواتین اور لڑکیوں کو جرائم سے پاک ماحول فراہم کیا جاسکے۔ وزیر اعلیٰ نے اس عزم کو دہرایا تھا کہ اُن کی حکومت ریاست میں بھی اسی طرح کے قوانین لانے کا ارادہ رکھتی ہے تا کہ خواتین کے خلاف جرائم کا خاتمہ کیا جاسکے۔
نیشنل کانفرنس کے صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے حال ہی میں کہا تھا کہ اُن کی جماعت نیشنل کانفرنس نے کٹھوعہ جیسے واقعات کے مرتکب ملزمان کے لئے موت کی سزا کا بل ریاستی اسمبلی میں لانے کا فیصلہ کیا ہے اور ہم حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ اس بل کو جلد سے جلد منظور کروانے کے لئے اسمبلی کا خصوصی اجلاس بالایا جائے۔انہوں نے کہا تھا ’ ہم ایک بل لائیں گے جس کی رُو سے ایسے واقعات کے مرتکب ملزمان کے لئے سزائے موت ہوگی۔
محترمہ مفتی کو اس کے لئے اسمبلی کا خصوصی اجلاس بلانا چاہیے۔ سزائے موت کا قانون بنے گا تو ایسے واقعات پیش نہیں آئیں گے‘۔ ضلع کٹھوعہ کے تحصیل ہیرانگر کے رسانہ نامی گاؤں کی رہنے والی آٹھ سالہ کمسن بچی جو کہ گجر بکروال طبقہ سے تعلق رکھتی تھی، کو 10 جنوری کو اُس وقت اغوا کیا گیا تھا جب وہ گھوڑوں کو چرانے کے لئے نذدیکی جنگل گئی ہوئی تھی۔ اس کی لاش 17 جنوری کو ہیرا نگر میں جھاڑیوں سے برآمد کی گئی تھی۔
کرائم برانچ پولیس نے گذشتہ ہفتے واقعہ کے سبھی 8 ملزمان کے خلاف چالان عدالت میں پیش کیا۔ کرائم برانچ نے اپنی تحقیقات میں کہا ہے کہ آٹھ سالہ بچی کو رسانہ اور اس سے ملحقہ گاؤں کے کچھ افراد نے عصمت ریزی کے بعد قتل کیا۔
تحقیقات کے مطابق متاثرہ بچی کے اغوا، عصمت دری اور سفاکانہ قتل کا مقصد علاقہ میں رہائش پذیر چند گوجر بکروال کنبوں کو ڈرانا دھمکانا اور ہجرت پر مجبور کرانا تھا۔ تحقیقات میں انکشاف ہوا ہے کہ کمسن بچی کو اغوا کرنے کے بعد ایک مقامی مندر میں قید رکھا گیاتھا جہاں اسے نشہ آور ادویات کھلائی گئیں اور قتل کرنے سے پہلے اسے مسلسل درندگی کا نشانہ بنایا گیا۔
جموں وکشمیر کرمنل پروسیجر کوڈ (ترمیم شدہ) کی رُو سے خصوصی جرائم جیسے ریپ کے واقعات کی ٹرائل چھ ماہ کے اندر مکمل کی جانی چاہیے۔ تاہم وزیر اعلیٰ نے جموں وکشمیر ہائی کورٹ کے چیف جسٹس سے گذارش کی ہے کہ وہ کٹھوعہ واقعہ کی فاسٹ ٹریک ٹرائل کے لئے فاسٹ کورٹ تشکیل دیں تاکہ کیس کو ٹرائل کو تین ماہ کے اندر مکمل کرلیا جائے۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

کروناندھی کی حالت بگڑی –

چنئی (ایجنسیز) تملناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ اور ڈی ایم کے کے سربراہ ایم کروناندھی …

جواب دیں

%d bloggers like this: