سرورق / خبریں / جدید ہندوستان کے جمہوری ڈھانچے کی تشکیل نہرو نے کی :پرنب

جدید ہندوستان کے جمہوری ڈھانچے کی تشکیل نہرو نے کی :پرنب

نئی دہلی، سابق صدر پرنب مکھرجی نے ملک کے پہلے وزیراعظم پنڈت جواہر لعل نہرو کو ہندوستان کی ’روح ‘ قرار دیتے ہوئے کہا کہ جدید ہندوستان کی تشکیل میں ان کی خدمات کو بھلایا نہیں جاسکتا۔ کیونکہ جمہوری ڈھانچے کو مضبوط کرنے کے لئے انہوں نے متعدد جمہوری اداروں کی تشکیل کی تھی۔ مسٹر مکھرجی نے آج یہاں نہرو کی ایک باتصویر سوانح کا اجرا کرتے ہوئے اس خیال کا اظہار کیا۔ کرناٹک کانگرس میڈیا سیل کے انچارج اے گوپنا کی تحریر کردہ اس سوانح کی پہلی جلد سابق وزیراعظم ڈاکٹر من موہن سنگھ کو پیش کی گئی۔
صابق صدر نے کہا کہ جدید ہندوستان کی تاریخ جن چند لوگوں سے منسلک ہے ان میں نہرو جی بھی ایک تھے لیکن وہ عظیم اس لئے نہیں تھے کہ وہ ملک کے پہلے وزیراعظم تھے یا سب سے زیادہ 17 برسوں تک وزارت عظمی کے عہدے پر فائز رہے۔بلکہ وہ عظیم اس لئے تھے کہ وہ ہندوستان کے جدید اور جمہوری ڈھانچے کے حقیقی معمار بھی تھے ۔ انہوں نے جمہوری ڈھانچے کو مستحکم کرنے کے لئے متعدد جمہوری اداروں کی تشکیل کی تھی۔ اگر نہرو جی نے ملک کی ترقی میں اپنا رول ادا نہ کیا ہوتا تو ہندوستان کی حالت آج لاطنی امریکہ اور افریقہ کے ملکوں جیسی ہوتی۔
مسٹر مکھرجی نے کہا ملک جب آزاد ہوا تو ہندوستان کی آبادی 35 کروڑ تھی اور 29 ایسی ریاستیں تھیں جو آج کے یوروپی یونین کے برابر ہیں ۔ ان میں 122 زبانیں اور بولیاں تھیں اور تقریبا 7 مذاہب تھے۔ دراوڑ ،آریہ اور منگول نسلوں کے کلچر کا بھی اثر تھا۔ اس لئے ایسے ہندوستان کے لئے ایک سسٹم کی تشکیل کرنی تھی۔ نہرو جی نے جامع جمہوری اداروں اور ڈھانچوں کی تعمیر کرکے اسے ممکن بنایا۔
انہوں نے کہا کہ ہندوستان کی قومیت ملک کو آزاد کرنے کے لئے بنے قانون اور دستور ساز اسمبلی یا کیبنٹ مشن اور ماونٹ بیٹن پلانٹس سے طے نہیں ہوتی بلکہ اس کی طویل اور قدیم تہذیب اور عوام سے ہوتی ہے۔ اس لئے نہرو جی کو سچا خراج عقیدت یہ ہوگا کہ ہم ان کے نکتہ نظر کا اپناتے ہوئے ان کی طرح ہندوستان کی دریافت کریں۔
اس سے پہلے سابق نائب صدر حامد انصاری نے مشہور مورخ ایچ ڈی ویلس کی کتاب ٹائم مشین کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ اس کتاب میں ٹکنالوجی کے ذریعہ قدیم تاریخ کو جاننے کی بات کہی گئی تھی لیکن آج کچھ لوگ تاریخ کو ہی بدلنے کی کوشش کررہے ہیں جبکہ انہیں یہ معلوم ہونا چاہیے کہ تاریخ تاریخ ہوتی ہے ۔ اس سے آپ نتائج تو نکال سکتے ہیں لیکن آپ اسے بدل نہیں سکتے۔
مشہور صحافی اور دی ہندو گروپ کے چیئرمین این رام نے کہا کہ نہرو جی نے ملک کو نئی بصیرت اور نیا تصور دیا۔ آج کچھ لوگ نہرو جی پر تنقید کرنے میں مصروف ہیں لیکن ان کی خدمات کو بھلایا نہیں جاسکتا۔ نہرو کی خدمات کے بغیر آج اس ملک کی حالت اور بھی خراب ہوتی۔
سوانح نگار مسٹر گوپنا نے کہا کہ وہ پچھلے نو برسوں سے اس کتاب کو لکھنے اور تصاویر اکٹھا کرنے میں لگے رہے اور کئی ہزار تصویروں میں سے سات سو تصویروں کو اس میں شامل کیا ہے۔ تاکہ نئی نسل نہرو جی کے کارناموں اور خدمات سے متعارف ہو سکے ۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

کروناندھی کی حالت بگڑی –

چنئی (ایجنسیز) تملناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ اور ڈی ایم کے کے سربراہ ایم کروناندھی …

جواب دیں

%d bloggers like this: