سرورق / خبریں / بی جے پی لیڈروں کے بیان سے ملک میں لنچنگ کے واقعات میں اضافہ: علی انور

بی جے پی لیڈروں کے بیان سے ملک میں لنچنگ کے واقعات میں اضافہ: علی انور

نئی دہلی، جنتا دل( یو)کے رہنما اور سابق ممبر پارلیمنٹ علی انور نے اتوار کو کہا کہ بھارتیہ جنتا پارٹی کے وزراء، ارکان پارلیمنٹ اور ممبران اسمبلی کےبیان کی وجہ سےملک میں لنچنگ کے واقعات میں مسلسل اضافہ ہورہاہے۔
مسٹر انور اور میواتی مورچہ اترپردیش کے صدر فخرالدين کوٹیا نے آج ایک پریس ریلیز جاری کرکے کہا ہے کہ سپریم کورٹ کی ہدایت کے بعد بھی ملک میں بھیڑ کی طرف سے پیٹ پیٹ کر قتل کے واقعات بڑھ رہے ہیں۔
حال ہی میں الور میں 29 سال کےمویشی پرور اکبر میو کا قتل پارلیمنٹ میں تحریک عدم اعتمادپر بحث کے دوران وزیر اعظم کی تقریر کے دوسرے دن ہی ہوئی ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ ایسا اس لیے ہو رہا ہے کہ حکومت کے سربراہ کے قول اور فعل میں زمین آسمان کا فرق ہے۔
بیان میں کہا گیا ہے کہ صرف ہریانہ میں بھیڑ کی طرف سے پیٹ پیٹ کر قتل کا یہ پانچواں واقعہ ہے۔ سب سے پہلے جب پہلو خاں کا قتل ہوا تو اس کی موت سے پہلے دیے گئے بیان میں نامزد چھ ملزمان کا نام بعد میں ایف آئی آر سے ہٹا دیا گیا اور اس معاملے کے تینوں ملزم ضمانت پر باہر ہیں۔
پہلو خاں کے قتل کے وقت بھی بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے ممبر اسمبلی گیان دیو اهوجا کا بیان قتل کے حق میں آیا۔ اس واقعہ میں بھی وہ قاتلوں کے دفاع میں بیان دے رہے ہیں۔ اکبر کا قتل جس رام گڑھ علاقے میں ہوا ہے وہاں کے بی جے پی ممبر اسمبلی بنواری لال نے بیان دیا ہے کہ مسلمان کسی بھی کام کےسلسلےمیں ان کے دفتر میں نہیں آ سکتے ہیں۔
بی جے پی حکومت کے وزراء، ارکان پارلیمنٹ اور ممبران اسمبلی کے اس طرح کے بیان کی وجہ سے ہی ملک میں اس طرح کے واقعات مسلسل ہو رہےہیں۔ راجستھان کی وزیر اعلی محترمہ وسندھرا راجے سندھیا کا اس معاملے میں سخت کارروائی کرنے کا بیان تو خوش آئند ہے، لیکن ان کےریاستی وزیر داخلہ گلاب چند کٹاریا کا بیان اس طرح کے واقعات کی لیپا پوتی کرنے والا ہے۔
دونوں رہنماؤں نے کہا کہ بی جے پی لیڈروں کا اس معاملے میں بیان آئین اور جمہوریت کے لئے خطرہ ہے۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

کروناندھی کی حالت بگڑی –

چنئی (ایجنسیز) تملناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ اور ڈی ایم کے کے سربراہ ایم کروناندھی …

جواب دیں

%d bloggers like this: