سرورق / خبریں / بھارت بند پر تشدد: مدھیہ پردیش میں حالات کنٹرول میں، مرنے والوں کی تعداد 7 ہوگئی –

بھارت بند پر تشدد: مدھیہ پردیش میں حالات کنٹرول میں، مرنے والوں کی تعداد 7 ہوگئی –

بھوپال، دلت تنظیموں کے بھارت بند کے اعلان پر پیر کو مدھیہ پردیش میں کچھ مقامات پر تشدد واقعات کے بعد آج صورتحال کنٹرول میں ہے۔ اس دوران مرنے والوں کی تعداد بڑھ کر سات ہو گئی۔ كر فیو زدہ گوالیار، مورینہ اور بھنڈ اضلاع میں پولیس کی گشت بڑھا دی گئی ہے۔ پولیس مشتبہ افراد کی گرفتاری کی کوششوں میں مصروف ہے۔کل کے پرتشدد واقعات میں گوالیار میں تین، بھنڈ ضلع میں تین اور مورینہ میں ایک شخص کی موت ہو گئی تھی اور کم از کم تیس افراد زخمی ہوگئے تھے۔ ان میں پولیس اہلکاربھی شامل ہیں۔
مورینہ سے ’ یو این آئی‘ کے مطابق شہر میں کل سے ہی کرفیو جاری ہے۔ رات بھر پولیس کی گشت جاری ہے ۔ آج صبح میں بھی لوگوں کو گھروں سے باہر نہیں نکلنے دیا جا رہا ہے۔ چمبل کے آئی جی سنتوش کمار سنگھ نے بتایا کہ حالات مکمل کنٹرول میں ہے۔ کچھ افراد کو حراست میں بھی لیا گیا ہے۔ قانون کسی کو بھی ہاتھ میں نہیں لینے دیا جائے گا۔
گوالیار سے ملنے والی اطلاعات کے مطابق وہاں بھی کرفیو جاری ہے۔ اضافی پولیس فورس کی گشت لگاتار جاری ہے۔گوالیار ضلع کے ڈبرا میں بھی حالات اب قابو میں ہیں۔ وہاں پر ہجوم نے پولیس فورس پر حملہ کیا تھا۔ گولی لگنے کی وجہ سے گوالیار میں دو اور ڈبرہ میں ایک شخص کی موت ہوئی ہے۔
ملک گیر بند کے دوران بھنڈ ضلع میں بھی پیر کو کافی توڑ پھوڑ ہوئی۔ ضلع کے مهگاؤں، گوهد اور لهار میں فسادیوں اور پولیس کے درمیان فائرنگ میں تین لوگوں کی موت ہوئی ہے۔ گاڑیوں میں توڑ پھوڑ اورآگ زنی ہوئی۔ حالات بگڑنے پر انتظامیہ نے تشدد زدہ علاقوں میں کرفیو نافذ کر دیا تھا۔ اس توڑ پھوڑ میں مهگاؤں کے سیکشن افسر ریونیو انل بنواريا،ڈپٹی پولیس سپرنٹنڈنٹ دیپک یادو اور سپاہی یوگیش دیکشت زخمی ہوئے ہیں۔ بھنڈ میں بی جے پی کے ایم پی بھاگیرتھ پرساد کے گھر پر بھی پتھراؤ کیا گیا۔ بھنڈ ضلع کے لهار علاقے کے رون تھانہ علاقہ کے مچھنڈ میں مہاویر سنگھ راجاوت (40) کی گولی لگنے سے موت ہو گئی ۔
اس معاملہ میں مچھنڈ پولیس تھانہ کے ہیڈ کانسٹبل رام كمار دوهرے اور سپاہی سلطان راٹھور کے خلاف دیر رات رپورٹ درج کی گئی ہے۔ مهگاؤں میں توڑ پھوڑ اور تشدد کے دوران آکاش گرگ کی گولی لگنے سے موت ہوئی، وہیں زخمی پردیپ جاٹو کی بھی بعد میں علاج کے دوران موت ہو گئی۔
بھنڈ ضلع میں کل صبح سے ہی تشدد کا آغاز ہوگیاتھا۔ہاتھ میں لاٹھیاں لے کر بہت سے لوگ سڑکوں پر اتر آئے اور مارکیٹ بند کرنے کے ساتھ سڑک پر چلنے والی گاڑیوں میں توڑپھوڑ شروع کر دی تھی۔ فی الحال بھنڈ ضلع کو چھاؤنی میں تبدیل کر دیا گیا ہے۔ بھنڈ ضلع کے لهار، مهگاؤں، گوهد اور بھنڈ شہر میں کرفیو جاری ہے۔ اسکول، کالج، کوچنگ سینٹرز بند کرا دئیے گئے ہیں. لوگوں سے افواہوں پر توجہ نہ دینے اور امن و امان برقرار رکھنے کی اپیل کی جا رہی ہے۔ ریاست کے تمام 51 اضلاع میں صوبائی پولیس ہیڈکوارٹر حالات پر نظر رکھے ہوئے ہے۔ صوبائی پولیس انتظامیہ تمام اضلاع کے پولیس سپرنٹنڈنٹوں سے رابطہ میں ہے. کل مظاہرے کے دوران شيوپور، اشوك نگر، ساگر، دیواس اور کچھ دیگر اضلاع میں بھی چھٹپٹ واقعات ہوئے تھے ۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

کروناندھی کی حالت بگڑی –

چنئی (ایجنسیز) تملناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ اور ڈی ایم کے کے سربراہ ایم کروناندھی …

جواب دیں

%d bloggers like this: