سرورق / بین اقوامی / باہمی سرحدی تنازعات کو حل کرنے کی کوششوں کو تیز کریں گے ہندوستان چین –

باہمی سرحدی تنازعات کو حل کرنے کی کوششوں کو تیز کریں گے ہندوستان چین –

ووہان، ہندوستان اور چین نے باہمی سرحدی تنازعے حل کرنے کی سمت میں آگے بڑھنے اور ایک دوسرے کوقابل قبول معاہدے کے لئے اپنی کوشش تیز کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ وزیر اعظم نریندر مودي اور چین کے صدر شی جن پنگ کی پہلی غیر رسمی سربراہ ملاقات کے بعد آج یہاں جاری ایک ریلیز کے مطابق دونوں ممالک کے اعلی رہنماؤں نے دو دن کے دورے کے دوران دو طرفہ اور عالمی اہمیت کے مسائل پرزبردست تبادلہ خیال کیا۔مسٹر مودی دو روزہ دورہ چین پر یہاں آئے ہیں۔ دونوں رہنماؤں نے باہمی سرحدی تنازعے حل کرنے کرنے کی کوشش تیز کرنے پر اتفاق کیا اور سرحدی تنازعے کے سلسلے میں خصوصی نمائندوں کو تعاون کی یقین دہانی کرائی اور ان سے مناسب، عقلی اور باہمی طور پر قابل قبول معاہدے کی طرف بڑھنے کی اپیل کی۔
دو طرفہ مجموعی تعلقات کو فروغ دینے کے ہندوستان اور چین کے سر حد کے تمام علاقوں میں امن اور ہم آہنگی کی اہمیت قبول کرتے ہوئے دونوں رہنماؤں نے سرحد پر باہمی افہام و تفہیم، اعتماد، فوجی ڈائیلاگ، مؤثر سرحد انتظامی امور اور عملیت پر زور دیا۔ دونوں ممالک کے رہنماؤں نے اپنی اپنی فوجوں میں یقین قائم کرنے کے اقدامات پر تیزی سے کام کرنے کی ہدایات دیئے۔ دونوں ممالک کی فوجیں باہمی اور یکساں سیکورٹی کے اصول، موجودہ ادارہ جاتی انتظام کی مضبوطی اور سرحدی علاقوں کے واقعات کے سلسلے میں اطلاعات کا تبادلہ کریں گے۔
ملاقات کے دوران مسٹر مودی اور مسٹر جن پنگ نے کہا کہ دونوں ممالک کی معیشتیں عالمی معیشت میں اسٹریٹجک اور فیصلہ کن اہم طاقت ہیں اور ان کا اثر علاقائی اور بین الاقوامی سطح پر ہوتا ہے۔ دونوں رہنماؤں نے کہا کہ ہندوستان اور چین کے پرامن، مستحکم اور متوازن تعلقات عالمی غیر یقینی صورتحال کے دور میں استحکام کے لئے مثبت ہوں گے۔
دونوں رہنماؤں نے دونوں ممالک کے لوگوں کی وسیع خوشحالی اور قومی سطح پر جدیدکاری اور علاقے میں ترقی کے لئے ماحول پیدا کرنے کے لئے دو طرفہ تعلقات کے مناسب انتظام پر اتفاق کیا اور کہا کہ اس سے ایشیا کی صدی کے لئے ماحول پیدا ہوں گے۔ اس کے لئے دونوں رہنماؤں نے باہمی تفہیم اور مسلسل شراکت پر اتفاق کیا۔
دونوں فریقوں نے ملاقات میں اسٹریٹجک اور طویل مدتی پس مناظر کو ذہن میں رکھتے ہوئے ہند چین تعلقات کے واقعات کا جائزہ لیا اور مستقبل کے تعلقات کے لئے موجودہ نظام کے تحت ایک وسیع پلیٹ فارم بنانے کی کوشش کرنے کی رضامندی ظاہر کی۔ دونوں رہنماؤں نے ایک دوسرے کی حساسیت، سروكاروں اور خواہشات کو ذہن میں رکھتے ہوئے باہمی تنازعات کا تصفیہ پرامن، پختگی اور صوابدید پر کرنے پر بھی اتفاق کیا۔
دونوں رہنماؤں نے زور دیا کہ علاقائی اور بین الاقوامی سطح پر ہندوستان اور چین کی دلچسپی ایک ہی ہے۔ اس کے لئے، دونوں فریق نے مشترکہ مفادات کے معاملات پر جامع مشورے کے ذریعے اسٹریٹجک مذاکرات کو مضبوط بنانے کی ضرورت پر زور دیا۔ دونوں رہنماؤں کا خیال ہے کہ اس سے باہمی افہام و تفہیم پر مثبت اثرات ہوں گے اور علاقائی اور بین الاقوامی استحکام اور مضبوط بنائیں گے۔
مسٹر مودی اور مسٹر جن پنگ نے عالمی خوشحالی اور سلامتی سے متعلق دونوں ممالک کی خارجہ پالیسی پر تبادلہ خیال کیا۔ دونوں رہنماؤں نے موسمیاتی تبدیلی، لگاتار ترقی، غذائی تحفظ جیسے عالمی چیلنجوں سے نمٹنے کے لئے دونوں ممالک کے مثبت اور تعمیری متحدہ شراکت پر بھی اتفاق کیا۔
انہوں نے ترقی پذیر ممالک کی ضروریات کو پورا کرنے کے لئےکثیر جہتی عالمی اداروں کو مالی اور سیاسی اصلاحات کی ضرورت پر زور دیا اور ان ممالک میں ان کی نمائندگی ہونے پر بھی اتفاق کیا۔
ریلیز کے مطابق غیر رسمی ملاقات کے دوران دونوں رہنماؤں نے براہ راست اور بہتر ماحول میں تبادلہ خیال کیا اور مستقبل میں بھی ایسی میٹنگیں منعقد کرنے پر اتفاق کیا۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

کروناندھی کی حالت بگڑی –

چنئی (ایجنسیز) تملناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ اور ڈی ایم کے کے سربراہ ایم کروناندھی …

جواب دیں

%d bloggers like this: