سرورق / خبریں / ایچ این ویلی منصوبہ کے پانی کے بارے میں شبہ کی ضرورت نہیں: شیو شنکر ریڈی

ایچ این ویلی منصوبہ کے پانی کے بارے میں شبہ کی ضرورت نہیں: شیو شنکر ریڈی

چکبالاپور: (محمد جیلانی، نامہ نگار) ایچ این ویلی آبی منصوبے کے ذریعہ ضلع کے تالابوں کو پانی بہائے جانے کا جو منصوبہ بنایا گیا ہے اس کے لئے تیسرے مرحلے میں پانی کو پاک و شفاف بنانے کیلئے 600 کروڑ روپئے کی لاگت کے منصوبے کو حکومت نے منظوری دے دی ہے۔ اس منصوبے کے تحت بہائے جانے والے پانی کے بارے میں کسی بھی طرح کے شک و شبہ کی ضرورت نہیں ہے۔ یہ بات ریاستی وزیر برائے زراعت این ایچ شیوشنکر ریڈی نے کہی۔ انہوں نے ضلع پنچایت میٹنگ ہال میں نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ کسانوں کے قرض معاف کرنے کے معاملے میں بھی ریاستی حکومت سنجیدہ ہے۔ مخلوط حکومت میں شامل دونوں پارٹیوں کی طرف سے قائم کردہ کوآرڈی نیشن کمیٹی میں اس خصوس میں حتمی فیصلہ کیا جائے گا۔ شیوشنکر ریڈی نے کہا کہ پچھلی حکومت نے جو این ایچ ویلی منصوبے کو منظوری دی تھی اور اس منصوبے کے ذریعہ ضلع کے تالابوں کو پانی بہانے اور زیر زمین پانی سطح میں اضافہ کر کے زراعت کیلئے پانی کی سہولت کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔ اس منصوبے کے تحت بنگلور کے استعمال شدہ پانی دو مرحلوں میں شفاف کرنے کے بعد بہایا جائے گا۔وزیر موصوف نے مزید کہا کہ ملک بھر میں راجستھان کے بعد ریاست کرناٹک کو بنجر زمین رکھنے میں دوسرا مقام حاصل ہے اور ریاست بھر کے بنجر علاقوں میں ہمارے ضلع کو اول مقام حاصل ہے۔اس سے چھٹکارا دلانے کے مقصد سے پچھلی حکومت نے 14 ہزار کروڑ روپئے کی لاگت کے یتینا ہولے منصوبے کو شروع کیا تھا جس کا کام تیزی کے ساتھ جاری ہے۔ ضلع میں بہت سارے ترقیاتی کام ہونے باقی ہیں ۔ ضلع میں میڈیکل کالج کے قیام کا اعلان ہوئے دو سال کا عرصہ گزر چکا ہے۔ اس میں تاخیر کیوں ہورہی ہے اس پر غور کیا جائے گا۔ ضلع میں بے روزگاری کا مسئلہ سے نمٹنے کیلئے صنعتوں کے قیام پر توجہ دی جائے گی۔ بنگلور یونیورسٹی کے قیام کا جو اعلان ہوا ہے اس پر بھی توجہ دی جائے گی۔ اس کے علاوہ چکبالاپور تعلقہ کے مدینہلی میں 350 کروڑ روپئے کی لاگت سے قائم کئے گئے وی ٹی یو میں مزید تعلیمی سنٹرس قائم کئے جانے پر بھی غور کیا جائے گا۔زراعت کے شعبے میں نئی ٹیکنک کے استعمال کے تعلق سے وزیر اعلیٰ کمار سوامی کے اعلان کے مطابق اسرائیل کے طرز پر ماڈل یا ڈرپ اری گیشن کے تعلق سے کسانوں کو بیدار کیا جائے گا۔ مخلوط حکومت میں وزیر کا عہدہ حاصل کرنے کے بعد پہلی مرتبہ ضلعی مرکز چکبالاپور کے دورے پر آئے ہوئے ریاستی وزیر کا مقامی رکن اسمبلی ڈاکٹر کے سدھاکر، وی منی اپا، ایس این سبا ریڈی اور دیگر نے استقبال کیا۔اس موقع پر جے کے کرشنا ریڈی، سابق رکن اسمبلی این سمپنگی، کے پی بچے گوڈا اور دیگر موجود تھے۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

مراٹھواڑہ میں زوردار بارش –

اورنگ آباد : مراٹھواڑہ میں اورنگ آباد ، عثمان آباد،لاتور ،ہنگولی ، پربھنی اور ناندیڑ …

جواب دیں

%d bloggers like this: