سرورق / خبریں / ایوان بالا میں نہیں ہوا وقفہ صفر اور سوالات،راجیہ سبھا دو بجے تک ملتوی-

ایوان بالا میں نہیں ہوا وقفہ صفر اور سوالات،راجیہ سبھا دو بجے تک ملتوی-

نئی دہلی، بجٹ سیشن کے دوسرے مرحلے کے آج مسلسل تیسرے دن راجیہ سبھا(ایوان بالا) میں مختلف پارٹیوں کا مختلف ایشوز کو لے کر ہنگامہ جاری رہا جس کی وجہ سے وقفہ صفر اور سوالات نہیں ہوسکا اور ایوان کی کارروائی دو بجے تک ملتوی کرنی پڑی۔
چیئرمین ایم وینکیا نائیڈو نے صبح ضروری قانون سازی کے کام نمٹانے کے بعد کہا کہ کچھ اخبارات میں مجسموں کے توڑے جانے کی خبریں آئی ہیں جس کے بارے میں وہ بعد میں بیان دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ مجسمے توڑے جانےکے واقعات غلط ہیں۔ یہ چاہے تمل ناڈو، مغربی بنگال یا تری پورہ میں توڑا جائے۔ اس پر کانگریس، لیفٹ، ڈی ایم کے، ترنمول کانگریس ، انادرمک اور شیوسینا کے رکن نعرے لگاتے ہوئے چیئر مین کے سامنے آگئے۔ کانگریس اور لیفٹ پارٹیوں کو چھوڑ کر دوسری پارٹیوں کے رکن مختلف رنگوں کا ٹیپ لگائے ہوئے تھے۔ یہ رکن اپنے اپنے مطالبات کی حمایت میں نعرے لگا رہے تھے اور تختیاں لہرا رہے تھے۔ چیئرمین نے شور شرابہ کر نے والے ارکان سے اپنی اپنی نشستوں پر واپس جانے کی اپیل کرتے ہوئے ان سے پرسکون ہونے اور ایوان کی کارروائی چلنے دینے کی اپیل کی۔ انہوں نے کہا کہ حکومت تمام معاملات پر بات چیت کے لیے تیار ہے اور ارکان كواپنی بات ایوان میں رکھنی چاہئے۔ ایوان بحث کے لئے ہوتا ہے لیکن ارکان کے برتاؤ سے ملک بھر میں غلط پیغام جا رہا ہے۔ اراکین کا ایسا برتاؤ جمہوریت کے خلاف ہے۔اس دوران کانگریس کے آنند شرما بولنے کے لئے کھڑے ہو گئے اور ڈی ایم کے کی کنی موجھی بھی زور زور سے بولنے لگی۔
مسٹر نائیڈو نے ارکان سے پرسکون ہونے اور اپنی اپنی نشستوں پر واپس جانے کی اپیل کی لیکن اس کا کوئی اثر نہیں ہوتے دیکھ کر انہوں نے ایوان کی کارروائی دو بجے تک ملتوی کر دی۔
ایوان میں کانگریس کے رکن بینک گھوٹالوں، بھارتی کمیونسٹ پارٹی اور مارکسی کمیونسٹ پارٹی کے رکن تریپورہ میں لینن کی مورتی توڑنے اورپر تشددکارروائیوں، شیوسینا کے رہنما مراٹهی کو کلاسیکی زبان کا درجہ دینے، انادرمک کے رکن کاویری مینجمنٹ بورڈ قائم کرنے، تیلگو دیشم پارٹی اور وائی ایس آر کانگریس کے رکن آندھرا پردیش کو مالی پیکیج دینے اورتلنگانہ راشٹر سمیتی کے رکن تلنگانہ میں ریزرویشن کا کوٹہ بڑھائے جانے کی مانگ پر شور شرابہ کر رہے تھےجسكے سبب آج ایوان کی کاروائی محض دس منٹ کے اندر ہی ملتوی کر دی گئی۔ انہی ایشوز کو لے کر اپوزیشن کے شور شرابے کی وجہ سے ایوان میں پیر اور منگل کو بھی کام کاج نہیں ہو سکا تھا اور بجٹ سیشن کے دوسرے مرحلے میں ابھی تک ایک دن بھی وقفہ صفر اور وقفہ سوالات نہیں ہو سکا ہے۔

Leave a comment

About saheem

Check Also

کروناندھی کی حالت بگڑی –

چنئی (ایجنسیز) تملناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ اور ڈی ایم کے کے سربراہ ایم کروناندھی …

جواب دیں

%d bloggers like this: